عالمی کپ نشانے بازی میں ہندوستان سرفہرست

نئی دہلی/ دو مرتبہ کے اولمپک چمپئن امریکی ونسنٹ ھیکک نے آئی ایس ایس ایف نشانے بازی عالمی کپ کے آخری مرد اسکیٹ مقابلے کا طلائی تمغہ اپنے نام کیا جبکہ ہندستانی ٹیم اس وقت اپنی شاندار کارکردگی کی بدولت پہلی بار ٹورنامنٹ میں چار طلائی سمیت سب سے زیادہ نو تمغوں کے ساتھ سرفہرست رہی۔میکسیکو گادالاجرا میں اتوار کو ختم ہوئے عالمی کپ میں ہندستانی ٹیم پہلی بار آئی ایس ایس ایف ٹورنامنٹ میں سب سے اوپر رہی۔ ہندستان نے ٹورنامنٹ میں چار طلائی، ایک چاندی اور چار کانسی سمیت کل نو تمغے جیتے جو اس کی عالمی کپ میں بہترین کارکردگی بھی ہے ۔اسکیٹ مقابلے میں ہندستان کے تین نشانے بازوں میں سمت سنگھ 116 پوائنٹس کے ساتھ کوالیفائنگ میں 15 ویں مقام، انگد باجوا 115 پوائنٹس کے ساتھ 18 ویں اور شیراز شیخ 112 پوائنٹس کے ساتھ 30 ویں نمبر پر رہے ۔بیجنگ اور لندن اولمپک چمپئن ونسیٹ نے بیجنگ اور لندن اولمپکس میں طلائی تمغہ جیتے تھے اور 2015 میں عالمی چمپئن شپ میں بھی فاتح رہے تھے ۔طویل عرصے کے بعد گادالاجرا سے واپسی کر رہے ونسیٹ نے کوالیفکیشن میں 125 میں سے 123 پوائنٹس حاصل کئے اور سب سے اوپر رہے اور 60 میں سے 59 کے اسکور کے ساتھ عالمی ریکارڈ کی بھی برابری کی۔آسٹریلیا کے پال ایڈمز نے اگرچہ ونسیٹ کو کافی چیلنج دیا لیکن شوٹ آف میں وہ آگے رہے اور طلائی پر قبضہ کیا جبکہ پال کو سلور سے اکتفا کرنا پڑا۔اٹلی کے تمارو کاسیڈرو نے فائنل میں 49 کا اسکور حاصل کرتے ہوئے کانسی کا تمغہ جیتا۔ہندستان کے سمت نے دن کا آغاز اچھا کیا اور شروع میں ساتویں نمبر پر رہے لیکن راؤنڈ 22، 23 اور 24 میں پھسل گئے وہیں انگد بھی کوالیفائنگ سے کافی دور رہ گئے ۔شیراز کی کارکردگی بھی انہیں فائنل تک نہیں لے جا سکی ۔اس سے پہلے عالمی کپ کے ابتدائی دنوں میں اگرچہ ہندستانی نشانے بازوں کا مظاہرہ قابل تعریف رہا اور ٹورنامنٹ کی تاریخ میں پہلی بار ہندستان میڈل ٹیبل میں سب سے اوپر رہا۔ ٹورنامنٹ میں شھزار رضوی، منو بھاکر، اکھل شیورن، اوم پرکاش متھروال، انجم مدگل اور میھلي گھوش جیسے نوجوان کھلاڑیوں نے تمغے جیتے اور اپنی کارکردگی سے متاثر کیا۔وہیں سینئر شوٹر جیتو رائے ، سنجیو راجپوت اور روی کمار کی کارکردگی متاثر کن نہیں رہی۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں