درندگی کا مظاہرہ کرنے والوں کیلئے ملک میںجگہ نہیں آصفہ کے قتل میںملوث افراد کو کیفر کردار تک پہنچایاجائیگا:نعیم اختر

سرینگر/ تعمیرات عامہ کے وزیر نعیم اختر نے8سالہ لڑکی کے قتل میں ملوث افراد کے خلاف سخت قانونی کارروائی عمل میں لانے کی حمایت کرتے ہوئے کہا کہ ریاست کو سب سے بڑا چلینج ہے کہ گناہ کرنے والوں کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے اور متاثرہ کنبے کو انصاف ملے ۔ انہوںنے کہا کہ احتجاج مظاہرے ،غلط بیان بازی سے قانون کو جھکایا نہیں جاسکتا ہے ۔ ادھر بالی ووڈ کے اداروں ،کھلاڑیوں اور صحافیوں نے کٹھوعہ کی 8سالہ آصفہ اور اتر پردیش کی 18سالہ دوشیزہ کے ساتھ پیش آئے واقعات پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ عظیم بھارت میں اس طرح کے واقعات انجام دینے والوں کیلئے جگہ نہیں ہونی چاہیے ۔رتیش ددیشمکھ اداکار نے آصفہ کے ساتھ پیش آئے واقعے کو درندگی کی حد قرار دیتے ہوئے کہا کہ ملوث افراد کے حق میں احتجاجی ریلیاں نکالنا کونسی جمہوریت ہے ،فرحان اختر نے آصفہ اور 18سالہ دوشیزہ کے ساتھ پیش آئے واقعات پر دلی رنج کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ کیا عظیم بھارت میں اس طرح کے لوگوں کی بھی حمایت کی جا تی ہے ؟انہوں نے نوجوانوں پر زور دیا کہ وہ سماجی برائیوں کے خاتمے کیلئے آگے آکر مذہب ،رنگ اور نسل سے بالا تر ہو کر اخلاقی درس دینے کیلئے اپنی خدما ت انجا م دیں ۔ ٹینس کی معروف کھلاڑی ثانیہ مرزا نے اتر پردیش اور کٹھوعہ کے واقعات کو بھارت کیلئے دھبہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ دنیا کی نظریں بھارت پر ٹکی ہوی ہے ،کیا اس عظیم ملک میں 18سالہ دوشیزہ اور 8سالہ لڑکی کی عزت محفوظ نہیں ؟ انہوںنے کہا کہ قانون کو حر کت میں آنا چاہیے اور انتظامیہ سنجیدہ ہو جائے تاکہ اتحاد و اتفاق باقی رہے ۔معروف صحافی برکھہ دت نے 8سالہ آصفہ کے ساتھ پیش آئے واقعہ کو درندگی قرار دیتے ہوئے کہا کہ ملوث افراد نے مندر میں گناہ کیا اور بھارت کا پرچم اوڑھ کر گناہ کو چھپانے کی بھر پور کوشش کی ۔ انہوںنے کہا کہ اس واقع سے انسانیت کا سر شرم سے جھک گیا ہے ۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں