انتخابات سے قبل شمالی کشمیر میں حفاظتی انتظامات سخت فوجی تنصیبات اور سرکاری عمارتوں پر فورسز کا پہرہ، لوگوں کی نقل و حمل پر کڑی نظر، جگہ جگہ راہگیروں کی جامہ تلاشی

سرینگر/اے پی آئی/شمالی کشمیر کے بارہمولہ ،کپواڑہ ،بانڈی ورہ پارلیمانی حلقے میں 11اپریل کو الیکشن سے پہلے ہی وادی کے طول ارض میں حفاظتی اقدامات انتہائی سخت کر دیئے گئے ہے جگہ جگہ پر پولیس و فورسز کی تعیناتی عمل میںلا کر راہگیروں کی جامہ تلاشی شناختی کارڈ چک کئے جارہے ہیں جبکہ پولیس اسٹیشنوں فورسز کیمپوں ،اہم سرکاری عمارتوں کے ارد گرد پولیس و فورسز کے پہرے بٹھا دیئے گئے ہیں سخت ترین حفاظتی اقدامات کے باعث لوگووں کو طرح طرح کے مشکلات کاسامنا کرنا ُپڑ رہاہے۔ بیماروں کواسپتالوں تک پہنچنے کے دوران درجنوںجگہوں پرروک کرایمبولنس ،مسافر اور نجی گاڑیوں کی بھی باریک بینی سے تلاشی لی جارہی ہے جبکہ سی سی ٹی وی کیمروں کے ذریعے لوگوں کی نقل و حرکت پرکڑی نظر رکھی جارہی ہے ۔ شمالی کشمیرکے بارہ مولہ حلقے کیلئے۱۱ñاپریل کورائے دیہی کا استعمال کرنے سے پہلے ہی وادی کے اطراف و اکنا ف میں پولیس وفورسز کی تعیناتی عمل  میں لاکر کشمیر وادی کو فوجی چھاونی میں تبدیل کردیا گیاہے جسکے نتیجے میںلوگوں کی نقل وحرکت بری طرح سے متاثر ہوئی ہے ۔ شمالی کشمیر کے بانڈی پورہ بارہمولہ کپوارہ اضلاع اور ان کے ملحقہ علاقوں میں ووٹ دالنے سے پہلے ہی تعلیمی اداروں کوبند کر دیا گیا ہے جبکہ راہگیروں کو روک کر ان کی جامہ تلاشی لینے کے ساتھ سا تھ شناختی کارڈ چک کئے جارہے ہیں ۔نمائندے کے مطابق سرکاری و پرائیوٹ اداروں میں ملازمین کی حاضری برائے نام دکھائی دے رہی ہے جگہ جگہ پر پولیس و فورسز کی تعیناتی عمل میںلا کر حفاظت کے اقدامات انتہائی سخت کردیئے ہے بیشتر شاہراہوں پر رکاوٹیں کھڑی کی گئی جس ے مال مسافر اور نیجی گاڑیوں کی آ واہ جاہی میں بھی دشواریاں  پیش آ رہی ہے سخت ترین حفاظتی اقدامات کے باعث وادی بھر میں لوگوں کو طرح طرح کے مشکلات کاسا مناکرنا ُپڑ رہاہے اور عوامی حلقوںنے بھی اس بات پرحیرتانگی کااظہا رکیا ہے کہ رائے دیہی خوخش اسلوبی کے ساتھ انجام دینے کی آڑ میں لوگوں کویرغمال بنایا گیا ہے جس سے خوف و دہشت میں مذید اضافہ ہوا ہے ۔نمائندے کے مطابق پولیس اسٹیشنوں ،فورسز کیمپوں، ریلوے اسٹیشنوں ،بس اسٹینڈوں ،اہم سرکاری عمارتوں کے ارد گرد بھی پولیس وفورسز کے  پہرے بٹھا دئے گئے ہیں۔ سی سی ٹی وی کیمروں کے زریعے لوگوں کی نقل و حرکت پرکڑی نظر رکھی جارہی ہے جبکہ کئی  علاقوں میں عسکریت  پسندوں کے ممکنہ حملو ں اور الیکشن کے دوران رخنہ اندازی کوروکنے کیلئے ڈروان کیمروںکوبھی استعمال عمل میںلایا جارہاہے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں