ورلڈ کپ:کارلوس براتھویٹ کی امپائرنگ کے فیصلوں پر مایوسی، حالیہ چند برسوں میں ویسٹ انڈیز کے ساتھ امپائرز کا رویہ درست نہیں رہا

ناٹنگھم/ویسٹ انڈین آل راؤنڈر کارلوس براتھویٹ نے ورلڈ کپ میں امپائرنگ کے فیصلوں پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ حالیہ چند برسوں میں ویسٹ انڈیز کے ساتھ امپائرز کا رویہ درست نہیں رہا کیونکہ دیگر ٹیموں کے مقابلے میں ویسٹ انڈیز کیخلاف زیادہ فیصلے سامنے آئے ہیں۔ کارلوس براتھویٹ کا آسٹریلیا کیخلاف پندرہ رنز سے ناکامی کے بعد کہنا تھا کہ جب بھی ان کے کسی بیٹسمین کے پیڈ پر بال لگتی ہے تو امپائرز کی انگلی فضائ میں بلند ہو جاتی ہے جبکہ ان کی گیند حریف کے پاؤں سے ٹکرائے تو وہی انگلی نیچے رہتی ہے جس کی وجہ سے ضائع ہونے والے ریویوز کی تلافی نہیں ہو پاتی۔ویسٹ انڈین آل راؤنڈر کا کہنا تھا کہ کرس گیل کیخلاف کیوی امپائر کرس گیفنی کے دو فیصلے غلط ثابت ہوئے تاہم تیسری بار وہ ایل بی ڈبلیو ہوئے تو اس سے ایک بال قبل امپائر مچل اسٹارک کی نوبال دیکھنے سے قاصر رہے جس کی وجہ سے فیصلہ کرس گیل کیخلاف گیا جن کو اس بال پر دراصل فری ہٹ ملنا چاہئے تھی جس پر انہیں آؤٹ قرار دیا گیا۔ان کا کہنا تھا کہ وہ نہیں جانتے کہ ایسا کہنے پر انہیں جرمانے کا سامنا کرنا پڑے گا لیکن امپائرنگ کا معیار انتہائی مایوس کن ہے کیونکہ ان کی بالنگ کے دوران سر کے قریب سے گزرنے والی بعض گیندوں کو بھی وائیڈ قرار دیا گیا اور بعض افراد کا یہ کہنا غلط نہیں ہے کہ ان کی ٹیم ایک ایسا میچ ہار گئی جس میں اسے جیتنا چاہئے تھا کیونکہ دونوں امپائرز سے میچ میں مسلسل غلطیاں سرزد ہوتی رہیں۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں