برکاتی کے گھر پر حملے اور ایاز اکبر کی اہلیہ کی علالت پر فرنٹ کااظہار تشویش، یاسین ملک کو رہا کرنے اور پابندی ہٹانے کیلئے مہم کاآغاز کردیا

سرینگر/ لبریشن فرنٹ کے محبوس چیئرمین محمد یاسین ملک کی مسلسل حراست اور لبریشن فرنٹ جیسی سیاسی جماعت پر پابندی عالمی اور اخلاقی قوانین کے اعتبار سے غیر قانونی ہے ۔عالمی برادری کو اس معاملے میں فوری مداخلت کرکے بھارت پر محمد یاسین ملک کو رہا کردینے اور لبریشن فرنٹ پر سے پابندی ہٹادینے پر زور ڈالنا چاہئے۔ لبریشن فرنٹ اس حوالے سے عالمی سطح پر’یاسین ملک کو رہا کرو‘ اور لبریشن فرنٹ پر سے پابندی ہٹائو مہم ‘ کا آغاز کررہی ہے۔ سپریم کونسل ممبران سے خطاب کرتے ہوئے لبریشن فرنٹ قائم مقام چیئرمین نے کہا کہ لبریشن فرنٹ کے محبوس چیئرمین محمد یاسین ملک جو ابھی دہلی کے تہاڑ جیل میں مقید ہیںکی مسلسل اسیری نہ صرف غیر قانونی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ بھارت عرصہ دراز سے کشمیریوں کو ظلم و تشدد کا نشانہ بناتا آرہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ایک جانب بھارت سب سے بڑی  اور متحرک جمہوریت ہونے کا دعویٰ کرتا ہے اور دوسری جانب کشمیریوں کی مزاحمت کو کچلنے کےلئے غیر جمہوری اور انسانیت سوز ہتھکنڈے استعمال کرنے سے بھی نہیں کتراتا۔ انہوں نے کہا کہ ظلم و جبر کو ایک ہتھیار بنانے والے بھارت کو جمہوریت اور آزادیٔ اظہار وغیرہ پر غرور جتاتا زیب نہیں دیتا۔بٹ صاحب نے کہا کہ یہ جموں کشمیر لبریشن فرنٹ اور اس کے قائد محمد یاسین ملک ہی تھے کہ جنہوں نے ۴۹۹۱ ÷ئ میں عالمی برادری کی ترغیب اور اپیل پر یک طرفہ سیز فائرکا پر خطر ......فیصلہ کیا اور زبردست اور بے انتہا اُکسائے جانے کے باوجود بھی چنے گئے عدم تشدد کے راستے پر گامزن رہنے کی جرات دکھائی۔درایں اثنائ لبریشن فرنٹ کے قائم مقام چیئرمین نے شوپیان میں مولانا سرجان برکاتی جو ۶۱۰۲÷ئ سے بھارتی حراست میں مقید ہیں کے گھر پر مشتبہ نقاب پوش افراد کے حملے اور ان کی بیوی کا گلا گھونٹ کر قتل کردینے کی کوشش جس میں بفضل اللہ تعالیٰ محفوظ رہیں‘ کی سخت الفاظ میںمذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس بزدلانہ حملہ کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے۔ قائم مقام چیئرمین نے ساتھ ہی ایک اور محبوس قائد محمد اکبر ایاز کی بیگم صاحبہ کی شدید علالت پر بھی سخت تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اکبر ایاز نام نہاد اور بے بنیاد کیس میں تہاڑ جیل میں صعوبتیں برداشت کررہے ہیں جب کہ ان کی بیوی شدید بیمار ہیں۔ قائم مقام چیئرمین نے آئی سی آر سی سے اپیل کی وہ دونوں اسیروں کے ان معاملات کو سنجیدگی سے لیں اور ان دونوں کو فوری طور پر رہا کرانے کےلئے بھارتی حکمرانوں پر زور ڈالیں۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں