نواز شریف کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری

اسلام آباد/ایجنسیز/ 15ستمبر/ اسلام آباد ہائی کورٹ نے العزیزیہ سٹیل ملز ریفرنس میں سزا یافتہ سابق وزیر اعظم نواز شریف کے ناقابل ضمانت وارنٹ گرفتاری جاری کر دیے ہیں۔ عدالت نے العزیزیہ سٹیل ملز ریفرنس میں اپنی سزا کے خلاف نواز شریف کی جانب سے دائر کردہ درخواست پر اْن کی عدم موجودگی میں سماعت جاری رکھنے اور اْن کی حاضری سے استثنا کی درخواستیں بھی مسترد کر دی ہیں۔ اس سے قبل اسلام آباد ہائی کورٹ نے نواز شریف کی جانب سے دائر کردہ درخواست کی باقاعدہ شنوائی سے قبل سابق وزیر اعظم کو عدالت کے سامنے سرینڈر کرنے کا حکم دیا تھا۔ تاہم نواز شریف کی جانب سے عدالت کو آگاہ کیا گیا تھا کہ وہ بیمار ہیں اور لندن میں زیر علاج ہیں۔ سابق وزیر اعظم نے عدالت سے یہ درخواست بھی کی تھی کہ ان کے نمائندے کے ذریعے عدالت اس مقدمے کی کارروائی آگے بڑھا سکتی ہے۔ آج کی سماعت سے متعلق عدالت اپنا تفصیلی فیصلہ آج شام جاری کرے گی جبکہ اس کیس میں آئندہ سماعت 22 ستمبر کو ہو گی۔ منگل کو ہونے والی سماعت کے دوران عدالت نے نواز شریف کے وکیل خواجہ حارث سے پوچھا کہ کیا ان کے موکل واپس پاکستان آ رہے ہیں یا نہیں؟ جس پر خواجہ حارث نے کہا کہ وہ نہیں آ رہے ہیں کیونکہ اُن کا علاج چل رہا ہے اور جب تک علاج مکمل نہ ہو جائے وہ واپس نہیں آئیں گے۔ جس کے بعد عدالت نے اس کیس میں اپنا مختصر فیصلہ سنا دیا۔ اس سے قبل بھی سابق وزیر اعظم میاں نواز شریف کے وکلا نے اسلام آباد ہائی کورٹ سے استدعا کی تھی کہ عدالت العزیزیہ سٹیل ملز ریفرنس میں اْن کے موکل کی اپیل پر اْن کی عدم موجودگی میں سماعت جاری رکھے کیونکہ نواز شریف کی صحت اس بات کی اجازت نہیں دیتی کہ وہ بیرون ملک سے اپنا علاج چھوڑ کر پاکستان میں عدالت کے روبرو پیش ہوں۔ عدالت کا کہنا تھا کہ العزیزیہ سٹیل ملز کے مقدمے میں اسلام آباد ہائی کورٹ کی طرف سے دی جانے والی ضمانت ختم ہو چکی ہے لہٰذا نواز شریف 10ستمبر تک اپنے آپ کو عدالت کے سامنے پیش کریں۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں