جموں کشمیر میں کووڈ معاملات میں نمایاں حد تک کمی

یونین ہوم سکریٹری نے یوٹیز میں کووڈ پوزیشن کا جائزہ لیا
ویکسین شرح 65فیصدی ملکی سطح پر کافی بہتر ۔ یونین ہوم سیکریٹری
جموں کشمیر کے شہری علاقوں سے زیادہ دیہی علاقوں سے اب زیادہ مثبت کیس آرہے ہیں ۔ چیف سیکریٹری
سرینگر/یونین ہوم سیکریٹری اجے کما ر بھلہ نے آج اعلیٰ سطحی میٹنگ میں تمام یونین ٹریٹریز میں کووڈ صورتحال کا جائزہ لیا ۔ اس میٹنگ میں چیف سیکریٹری جموں کشمیر بی وی آر سبھرمنیم کے علاوہ دیگر یوٹیز اور متعلقہ محکمہ جات کے یونین سیکریٹریز نے حصہ لیا ۔ ہوم سیکریٹری نے یوٹیز کی جانب سے کووڈ 19مخالف کوششوں کی سراہنا کرتے ہوئے کہا کہ مزید ہوشیار رہنے کی ضرورت ہے ۔ انہوں نے یوٹیز پر زور دیا کہ وہ اپنے تجربہ کو مد نظر رکھتے ہوئے ٹسٹنگ میں مزید تیزی لائی جائے اور کووڈ گائڈ لائنوں پرصد فیصد عمل کو یقینی بنانے کے ساتھ ساتھ میڈیکل انفراسٹریکچر کو بہتر بنائیں ۔یونین سیکریٹری صحت اور خاندانی بہبود نے ابتداءمیں یوٹیز کی موجودہ صورتحال پر ایک مفصل جائزہ پرزنٹیشن پیش کی ۔ اس موقعے پر کہا گیا کہ جموں کشمیر میں دوسری لہر پر قابو پانے کےلئے بہتر طریقہ کار اپنا یا جس میں 3,946فی ملین میں مثبت نمونے آئے جبکہ گزشتہ دو ہفتوں سے 62اموات ریکارڈ کی گئیں جو آبادی کے تناسب سے اعتدال پر ہے ۔ میٹنگ میں چیف سیکریٹری نے جموں کشمیر میں کووڈ 19پر قابو پانے اور اس کے مزید پھیلاﺅ کو روکنے کےلئے سرکاری سطح پر کئے گئے اقدامات پر مفصل جانکاری دیتے ہوئے کہا کہ سرکار نے ٹسٹنگ اور ویکسین دنوں میں تیزی لائی اور ابتداءمیں وائرس کی نشاندہی سے مریضوں کو ابتدءمیں ہی علاج کی سہولیت مئیسر ہوئی جبکہ ویکسین نے متاثرین کی حالت مستحکم بنانے میں مدد ملی ۔ انہوںنے کہا کہ ان دونوں اقدامات سے یوٹی میں کووڈ صورتحال کافی حد تک قابو میں رہی ۔ میٹنگ میں بتایا گیا کہ جموں کشمیر ایسے خطوں میں جہاں پر 45سے زائد عمر والے افراد میں ویکیسن کی شرح بہتر رہی اور 66فیصدی اس عمر کے افراد نے ویکسین لیا ہے جوکہ ملکی سطح کی 32فیصدی ہے ۔ جموں کشمیر کے چار اضلاع گاندربل، جموں ، سانبہ اور شوپیاں میں اس عمر کے زمرے میں آنے والے 100فیصدی افراد کو ویکسین دیا گیا ہے ۔ میٹنگ میں مرکزی سرکار سے مطالبہ کیا گیا کہ جموں کشمیر میں 18سے 45عمر والے تمام افراد کو ٹیکہ لگانے کےلئے یوٹی کو وافر مقدر میں ویکسین فراہم کئے جائیں ۔ اس موقعے پر چیف سیکریٹری نے کہا کہ کووڈ صورتحال پر قابو پانے کےلئے وقت پر کئے گئے اقدامات سے 5500سے 2200تک متاثرین کی تعداد رہی ۔
اسی عرصے میں کیس کی مثبتیت کی شرح میں 13 فیصد سے 6.2 فیصد تک کمی دیکھنے میں آئی۔ اس دوران چیف سکریٹری نے نشاندہی کی کہ جموں و کشمیر میں اب شہری علاقوں کے مقابلے دیہی علاقوں سے زیادہ کیس رپورٹ کیے جارہے ہیں انہوں نے مزید کہا کہ اس طرح کے کیس بالترتیب جموں و کشمیر ڈویژنوں میں زیادہ سے زیادہ 55 فیصد اور 60 فیصد ہیں۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں