وزیر داخلہ کی کشمیری عوام کو یقین دہانیاں

 وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے کل اننت ناگ کا دورہ کیا۔ وادی میں قیام کے دوران کئی عوامی وفود ان سے ملے اور اپنے مسایل و مشکلات سے انہیں آگا ہ کیا۔ وزیر داخلہ نے ان سب لوگوں کے مسایل کو غور سے سننے کے بعد اس بات کا یقین دلایا کہ ان کو حل کرنے کی کوشش کی جائے گی۔ وزیر داخلہ کی آمد کے موقعے پر وادی بھر میں سخت ترین حفاظتی انتظامات کئے گئے تھے پہلے ایس کے آئی سی سی میں عوامی ملاقات کا پروگرام رکھا گیا تھا جسے بعد میں تبدیل کردیا گیا کیونکہ انٹلی جنس حکام نے اس کی اجازت نہیں دی اور اس کے بدلے بعد میں وزیرداخلہ نہرو گیسٹ ہاوس میں لوگوں سے ملے اور ان کے مسایل و مشکلات سے جانکار ی حاصل کی۔ کل یعنی وزیر داخلہ کے وادی میں قیام کے دوسرے دن وہ اننت ناگ گئے جہاں اس موقعے پر زبردست حفاظتی انتظامات کئے گئے تھے۔ سیکورٹی کا ایسا سخت انتظام تھا کہ جموں سرینگر شاہراہ پر کسی بھی گاڑی کو چلنے کی اجازت نہیں دی گئی حتیٰ کہ مریضوں کو بھی شاہراہ پر سفر کرنے سے روکا گیا۔ ڈسٹرکٹ پولیس لائینز جہاں وزیر داخلہ نے قیام کیا کے اوپر فضائیہ کے طیار ے گشت لگاتے رہے۔ وہاں مختصر قیام کے بعد راج ناتھ واپس آگئے۔ گذشتہ شام انہوں نے وزیر اعلیٰ او ر گورنر کے ساتھ ملاقات کی۔ وزیر داخلہ نے گورنر سے ملاقات کے دوران بلدیاتی اور پنچائیتی انتخابات کے انعقاد پر تبادلہ خیال کیایہ انتخابات گذشتہ برس ہی کئے جانے کا اعلان کیاگیا تھا لیکن وادی میں حالات اس قدر بگڑ گئے جن کے بنا ئ پر بلدیاتی انتخابات کا انعقاد عمل میں نہیں لایا جاسکا۔ لیکن اب وزیر داخلہ نے بذات خود ان انتخابات کے انعقاد کے معاملے پر گورنر کے ساتھ تبادلہ خیال کیاجس سے یہ امید بندھ گئی کہ ان انتخابات کا انعقاد بہت جلد عمل میں لایا جاسکتا ہے کیونکہ پنچائیتوں اور بلدیاتی اداروں کی عدم موجودگی کی وجہ سے ریاست کو ان کروڑوں روپے کے فنڈز سے محروم ہونا پڑرہا ہے جو مرکز کی طرف سے ہر اس ریاست کو فراہم کئے جاتے ہیں جہاں یہ دونوں عوامی ادارے قایم ہوں۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ ان انتخابات کے بارے میں ریاستی حکومت کیا فیصلے لیتی ہے۔ وزیر اعلیٰ کے ساتھ ملاقات کے دوران محبوبہ مفتی نے انہیں مختلف پروجیکٹوں کی فوری تکمیل کیلئے رقومات کی بر وقت ادائیگی اور باقاعدہ واگذاری یقینی بنانے پر زور دیا۔ یہ امر قابل ذکر ہے کہ بہت سے ایسے پروجیکٹوں پر کام سست رفتار ی سے جاری ہے جن کو برسوں پہلے شروع کیا گیا تھا کیونکہ وقت پر رقومات واگذار نہ کرنے کے نتیجے میں ان پر کام باربار روک دینا پڑا تھا اب جبکہ وزیر اعلیٰ نے وزیر داخلہ پر ان پروجیکٹوں کیلئے بروقت رقومات فراہم کرنے پر زور دیا تو دیکھنا یہ ہے کہ وزیر داخلہ اس بارے میں کیا کرینگے۔ اسی طرح جیسا کہ اس سے پہلے بھی ان ہی کالموں میں اس بات کا تذکرہ کیاجاچکا ہے کہ بیروزگاری پرقابو پانے کیلئے مرکز کی پالیسی اور پروگراموں کا اعلان بھی متوقع ہے جس کا پتہ اسی وقت چل سکتا ہے جب آج دورے کے اختتام پر وزیرداخلہ پریس کانفرنس سے خطاب کرینگے ۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں