سیاسی قائدین اور کارکنوں کی گرفتاری اور خانہ نظر بندی حریت’گ‘ کی طرف سے مذمت کی گئی

سرینگر/ حریت کانفرنس’گ‘ نے سیاسی قائدین کی تھانہ وخانہ نظربندی کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ محمد اشرف صحرائی بدستور اپنے گھر میں نظربند ہیں۔ حریت ترجمان غلام احمد گلزار اور مولوی بشیر احمد عرفانی کو تحصیلدار کے سامنے پیش کیا گیا، جہاں ان کی ضمانت کی گئی اور انہیں رہا کردیا گیا، مگر باہر آتے ہی پولیس نے انہیں دوبارہ گرفتار کرکے تھانہ شیر گھڑی میں بند کردیا ہے، جبکہ عمر عادل ڈار جو نوگام تھانہ میں مقید ہیں شدید بیمار ہوئے ہیں اور ان کو علاج ومعالجہ بھی فراہم نہیں کیا جارہا ہے جو کہ سراسر ناانصافی ہے۔ حریت کانفرنس نے قائدین کی فوری رہائی پر زور دیتے ہوئے کہا کہ ان کو گرفتار رکھنے کا کوئی قانونی، اخلاقی اور انسانی جواز نہیں ہے، یہ سراسر انتقام گیری ہے جس کو کسی بھی صورت میں برداشت نہیں کیا جاسکتا ہے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں