الطاف بخاری کو وزارت خزانہ کا اضافی چارج    محنت اور روزگار محکموں کے قلمدان بھی سونپے گئے

سرینگر/کے این ایس /وزیر تعلیم سید محمد الطاف بخاری کو خزانہ ، محنت و روزگار محکموں کا چارج سونپا گیا ہے ۔یہ محکمے ان کے پاس موجودہ ذمہ داریوں کے علاوہ ہوں گے۔اس سلسلے میں وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی کی طرف سے ایک حکمنامہ جاری کیا گیا جس کی رو سے جموں وکشمیر گورنمنٹ بزنس رولز کے رول 5 اور عبوری قدم کے تحت سید محمد الطاف بخاری کو خزانہ ، روزگار اور محنت محکموں کا قلمدان بھی سونپا گیاہے ۔یہ حکمنامہ کل جاری کئے گئے اُس حکمنامے کے بعد جاری کیاگیا ہے جس میں کہا گیا تھا کہ خزانہ ، محنت و روزگار محکموں کو قلمدان وزیر اعلیٰ کے پاس ہی رہیں گے۔اس وقت تک الطاف بخاری کے پاس سکولی اور اعلیٰ تعلیمی محکموں کا قلمدان ہے ۔بخاری نے سابق وزیر اعلیٰ مفتی محمد سعید کے دور حکومت میں محکمہ تعمیرات عامہ کی سربراہی کی تھی۔ایگریکلچرل گریجویٹ سید محمد الطاف بخاری ریاستی قانون سازیہ میں امیرا کدل حلقہ انتخاب میں نمائندگی کرتے ہیں۔ادھروزیرتعلیم سیدمحمدالطاف بخاری نے اضافی ذمہ داری دئیے جانے کی تصدیق کرتے ہوئے کے این ایس کوبتایاکہ وہ تینوں محکموں کے اعلیٰ حکام کیساتھ میٹنگوں کے بعدوہ اپنی ترجیحات کاتعین کریں گے ۔انہوں نے کہاکہ وہ سبھی محکموں کے اعلیٰ افسران کی میٹنگ طلب کرکے تینوں /جاری صفحہ نمبر ۱۱پر
محکموں کے کام کاج کاجائزہ لیں گے ،اوراسکے بعدہی وہ ان محکمہ جات کے حوالے سے اپنی ترجیحات کافیصلہ لیں گے ۔نہوں نے ڈاکٹرحسیب درابوکوایک اہل منتظم قراردیتے ہوئے یہ واضح کیاکہ عارضی ملازمین کی مستقلی کے عمل میں کوئی تبدیلی نہیں لائی جائیگی۔سیدالطاف بخاری کاکہناتھاکہ وہ حسیب درابوکی جانب سے بطوروزیرخزانہ اُٹھائے گئے اچھے اقدامات کوآگے بڑھائیںگے ۔بطور وزیرخزانہ اضافی چارج سنبھالنے کے فوراًبعدسیدالطاف بخاری نے کہاکہ مختلف سرکاری محکموں میں تعینات ہزاروں عارضی ملازمین کی باقاعدگی کے حوالے سے ڈاکٹرحسیب درابونے جوپالیسی مرتب کی ہے ،اُس پرعمل جاری رہے گا،اوریہ کہ اس میں کوئی بھی تبدیلی نہیں لائی جائیگی۔انہوں نے کہاکہ عارضی ملازمین کی مستقلی کے حوالے سے جوعمل شروع کیاگیاہے ،وہ جاری رہے گا۔الطاف بخاری کاکہناتھاکہ یہ ریاستی سرکارکامتفقہ فیصلہ تھاکہ سرکاری محکموں میں برسوں اوردہائیوں سے کام کررہے ڈیلی ویجروں ،کیجول لیبروں اوردوسرے عارضی ملازمین کی ملازمتوں کوباقاعدہ بنایاجائے اوریہ عمل جاری رہے گا۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں