وزیرداخلہ کی سربراہی میں نئی دہلی میں اعلیٰ سطحی میٹنگ ریاست کی صورتحال کا جائزہ لیاگیا

نئی دہلی /نئی دہلی میں مرکزی وزیر داخلہ کی سربراہی میں اعلیٰ سطحی میٹنگ کے دوران ریاست کی تازہ ترین سیکورٹی صورتحال کا جائزہ لیا گیا۔ معلوم ہوا ہے کہ میٹنگ کے دوران پیرا ملٹری فورسز کو جدید خطوط پر استوار کرنے کیلئے/جاری صفحہ نمبر ۱۱پر
 ہنگامی بنیادوں پر اقدامات اٹھانے کا فیصلہ کیا گیا جبکہ عسکریت پسندوں کے خلاف سخت کارروائی عمل میں لانے کا بھی فیصلہ کیا گیا ۔ میٹنگ کے دوران جموں سرینگر شاہراہ پر جگہ جگہ موبائیل بینکر تعمیر کرنے کو ہری جھنڈی دکھائی گئی ۔ میٹنگ کے دوران سوشل میڈیا کے ذریعے نوجوانوں کو اکسانے کا معاملہ بھی چھایا رہا اور ملوثین کے خلاف سخت کارروائی عمل میں لانے کے احکامات صادر کئے گئے۔ ریاست خاص کرو ادی کشمیر میں عسکری کارروائیوں اورحد متارکہ پر دراندازی کے واقعات میں اضافہ ہونے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے مرکزی وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے اعلیٰ سطحی میٹنگ کے دوران ریاست کی تازہ ترین سیکورٹی صورتحال کا جائزہ لیا ۔ میٹنگ کے دوران سوشل میڈیا کے ذریعے نوجوانوں کو تشدد کی طرف دھکیلنے اور امن و امان درہم برہم کرنے کا معاملہ بھی چھایا رہا ۔ ذرائع کے مطابق میٹنگ کے دوران وزیر داخلہ کو بتایا کہ ریاست جموںوکشمیر میں سوشل میڈیا پر نظر گزر رکھنے کیلئے نئی حکمت عملی اپنائی جار ہی ہے تاکہ ایسے عناصر کے ارادوں کو ناکام بنایا جاسکے جو لوگوں کو تشدد کیلئے اُکسا رہے ہیں۔ معلوم ہوا ہے کہ خفیہ اداروں کے آفیسران نے اس موقعے پر بتایا کہ سوشل میڈیا کے ذریعے غلط پیغامات لوگوں تک پہنچانا آسان ہے جس کی طرف توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ سیکورٹی سے وابستہ ایک سینئر آفیسر نے میٹنگ کے دوران بتایا کہ ریاست خاص کر وادی کشمیر میں پیرا ملٹری فورس کسی بھی چیلنج کا مقابلہ کرنے کیلئے تیار ہیں ۔ انہوںنے کہاکہ پیرا ملٹری فورس جنگجو مخالف آپریشن کے دوران بھی اپنی خدمات انجام دے رہے ہیں جبکہ سی آر پی ایف کوجدید خطوط پر استوار کرنے کیلئے بھی ہنگامی بنیادوں پر اقدامات اٹھائے جار ہے ہیں۔ اس موقعے پر وزیرداخلہ راج ناتھ سنگھ نے کہاکہ عسکریت پسندوں کے عزائم کو ناکام بنانے کیلئے کوئی دقیقہ فروگزاشت نہیں کیا جائے گا۔ انہوںنے کہاکہ ریاست خاص کر وادی کشمیر میں کسی کو بھی امن و امان درہم برہم کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی اور سماج دشمن عناصر کے خلاف پہلے ہی کارروائی عمل میں لانے کے احکامات صادر کئے گئے ہیں۔ میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے وزیر داخلہ نے کہاکہ پاکستانی زیر انتظام کشمیر میں عسکریت پسندوں کو جدید اسلحہ کی تربیت دے کر اس طرف دھکیلا جا رہا ہے تاہم سرحدوں پر فوج کو چوبیس گھنٹے متحرک رہنے کے احکامات صادر کئے ہیں۔ انہوںنے کہاکہ پچھلے دو ہفتوں کے دوران حد متارکہ پر تیس کے قریب جنگجوئوں کو مار گرایا گیا ہے جو اس بات کا ثبوت ہے کہ فوج پوری طرح سے چوکس ہے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں