جینت سنہا کو برخاست کیا جائے :کانگریس

نئی دہلی، 9 جولائی ﴿یو این آئی﴾ کانگریس نے پیٹ پیٹ کر قتل معاملے کے ایک خاطی کو مرکزی وزیر جینت سنہا کی طرف سے پھولوں کا ہارپہنانے کے لیے بھارتیہ جنتا پارٹی کی نفرت اور فرقہ واریت پھیلانے کی سیاست کا حصہ اور مجرموں کی حوصلہ افزائی کرنے والی کارروائی قرار دیا اور کہا کہ وزیراعظم نریندر مودی کوانہیں فوری طور پر برطرف کرنا چاہئے ۔ کانگریس کے ترجمان پرمود تیواری نے پیر کو یہاں پارٹی کی باقاعدہ پریس بریفنگ میں کہا کہ مسٹر سنہا آئین کا حلف لے کر وزیر بنے ہیں اور اس عہدے پر رہتے ہوئے انہوں نے خاطی کو اعزاز دے کر آئینی جرم کیا ہے اور اس کے لئے انہیں خود استعفی دینا چاہئے ۔ اگر وہ استعفی نہیں دیتے تو پھر وزیر اعظم کو فوری طور پر وزارت سے ہٹا دینا چاہئے ۔بی جے پی پر سیاست کو سرکاري شکل دینے کا الزام لگاتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ملک کے مختلف حصوں میں پیٹ پیٹ کر قتل کرنے کی وارداتیں ہو رہی ہیں اور مرکزی وزیر ایسے واقعات کو انجام دینے والوں کی حوصلہ افزائی کررہے ہیں اس سے صاف ہے کہ بی جے پی اس طرح کے واقعات کو انجام دینے والے عناصر کی حوصلہ افزائی کر کے بڑھاوا دے رہی ہے اور سیاست کے لئے ماحول بگاڑنے کی کوشش کر رہی ہے ۔قابل ذکر ہے کہ مسٹر سنہا نے جھارکھنڈ میں پیٹ پیٹ کر قتل کرنے کے خاطی کو حال ہی میں ضمانت پر رہا ہونے کے بعد ان سے ملنے آنے پر پھولوں کا ہار پھنایا تھا۔ ترجمان نے کہا کہ پیٹ پیٹ کر قتل کے واقعات مسلسل بڑھ رہے ہیں لیکن ان واقعات پر مسٹر مودی خاموشی اختیار کئے ہوئے ہیں۔ وزیر اعظم کی خاموشی سے مجرم سمجھ گئے ہیں کہ کسی کا کچھ بگڑنے والا نہیں ہے لہذا مجرموں کے حوصلے بلند ہیں اور ملک کے مختلف حصوں میں اس طرح کے واقعات مسلسل بڑھ رہے ہیں۔
\ انہوں نے کہا کہ 2017 میں ملک کے مختلف حصوں میں 61 واقعات ہوئے ہیں۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں