لاپتہ افراد کے لواحقین،عز یز واقارب کا احتجاج اقوام متحدہ کی رپورٹ چشم کشا،بھارت دنیا کے سامنے جواب دہ :پروینہ آہنگر

سرینگر/ کے این این /لاپتہ افراد کے لواحقین اور عزیز واقارب نے ماہانہ احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ جاری رکھا ،جس دوران انہوں نے عالمی برداری پر زوردیا کہ وہ اس انسانی معاملے کا نوٹس لیا ۔لاپتہ افراد کے والدین کی تنظیم اے پی ڈی پی کی سربراہ پروینہ آہنگر نے اقوام متحدہ کے انسانی حقوق شعبہ کی /جاری صفحہ نمبر ۱۱پر
جانب سے کشمیر پر جاری کی گئی رپورٹ کا خیر مقدم کیا جبکہ انہوں نے کہا کہ بھارت کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالیوں پر دنیا کے سامنے جوابدہ ہے ۔ لاپتہ افراد کے لواحقین اور عزیز واقارب نے پرتاپ پارک سرینگر میں جمع ہو کر منگلوار کو ایک مرتبہ پھر اپنا احتجاج درج کرایا ۔یہ احتجاجی دھرنا لاپتہ افراد کے والدین کی تنظیم اے پی ڈی پی کے بینر تلے دیا گیا جبکہ اس احتجاج کی قیادت تنظیم کی سربراہ پروینہ آہنگر کررہی تھیں ،یہ ماہانہ رعلامتی احتجاج ہے ،جو ہر دس تاریخ کو کیا جاتا ہے ۔حسب معمول احتجاجی مظاہرین نے اپنے لاپتہ عزیز واقارب کی تصاویر اور اُنکے نام کے بینر ہاتھوں پر اٹھا رکھے تھے ۔مظاہرین کے ہاتھوں میں پلے کارڈس بھی تھے ،جن پر لاپتہ افراد کی بازیابی کے حق میں نعرے تحریر تھے۔اس موقع پر اے پی ڈی پی کی سربراہ پروینہ آہنگر نے کے این این سٹی رپورٹر کے ساتھ بات کرتے ہوئے کہا کہ ریاستی اور بھارتی حکمرانوں کو اپنے لخت جگروں کا پتہ بتاناہوگا ،کہ وہ آخر کہاں ہیں ؟ان کا کہناتھا کہ اُن کے بچوں کو فو ج وفورسز اور دیگر سیکیورٹی ایجنسیوں نے اُن کے سامنے لیا اور پھر لاپتہ کردیا ،پروینہ آہنگر نے بتایا ’ہمیں بتایا جائے ہمارے بچے کہاں ہیں ؟زندہ ہیں یا مارے گئے ،کہاں دفن کیا گیا ،ہمیں وہ سب بتایا جائے ‘۔اس موقعہ پر اقوام متحدہ انسانی حقوق شعبہ کی جانب سے حال ہی میں جاری کی گئی رپورٹ کا خیر مقدم کرتے ہوئے پروینہ آہنگر نے عالمی برادری نے بھی تسلیم کیا کہ کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالیاں ہوئی اور ہورہی ہیں ۔انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ نے کشمیریوں کے اُس موقف پر مہر ثبت کی کہ فوج وفورسز کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالیوں کی مرتکب ہوچکی ہے اور ہورہی ہیں ۔انہوں نے کہا بھارت دنیا کے سامنے انسانی حقوق کی پامالیوں کے حوالے سے جوابدہ ہے ۔پروینہ آہنگر نے کہا کہ حکومت ہند اپنے لوگوں کو گمراہ کرسکتی ہے ،لیکن دنیا کو وہ زیادہ دیر اندھیرے میں نہیں رکھ سکتی ہے ،کیونکہ اب عالمی سطح پر کشمیریوں کے انسانی حقوق کے حوالے سے آواز بلند ہونے لگی ہے ۔اس دوران انہوں نے منظور احمد ساکنہ دیو سر نامی نوجوان کی گمشدگی کا معاملہ بھی اٹھایا ،جو31اگست 2017سے لاپتہ ہے ۔مظاہرین نے مطالبہ کیا کہ منظور کو بازیاب کیا جائے اور اُنکے اہلخانہ کو بتایا جائے کہ وہ کہاں ہے؟

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں