ExecuteReader requires an open and available Connection. The connection's current state is connecting. کندلن معرکہ میں 2جنگجو جاں بحق مظاہرین کو منتشر کرنے کیلئے گولیوں کی بوچھاڑ،ایک اور معصوم طالب علم ازجان، 50سے زیادہ زخمی جنگجو نوجوانوں کی فائرنگ سے ایک جونیئر کمشنڈ آفیسر اور دو فوجی شدید زخمی

کندلن معرکہ میں 2جنگجو جاں بحق مظاہرین کو منتشر کرنے کیلئے گولیوں کی بوچھاڑ،ایک اور معصوم طالب علم ازجان، 50سے زیادہ زخمی جنگجو نوجوانوں کی فائرنگ سے ایک جونیئر کمشنڈ آفیسر اور دو فوجی شدید زخمی

شوپیان / نیازحسین / عارف وانی / کے این ایس / اے پی آئی / کے این این / سی این ایس / یو پی آئی /سی این آئی /شو پیاں کے کندلن علاقے میں جنگجوئوں اور فورسز کے درمیان پیش آئی شدید معرکہ آرائی کے دوران 2جنگجو/جاری صفحہ نمبر ۱۱پر
 نو جوان اور ایک 18سالہ نو عمر لڑکے سمیت 3افراد جان بحق ہو ئے جبکہ جھڑپ کے دوران ایک جے سی او سمیت 2فوجی اہلکار زخمی ہو ئے ۔اس دوران مقامی لوگوں کی بھاری تعداد نے محاصرے کے فوراً بعد جائے جھڑپ کی طرف پیش قدمی کر نے کی کو شش کی جسے فورسز نے ناکام بنادیا تاہم اس دوران فورسز اہلکاروں نے مظاہرین کو منتشر کر نے کے لئے فائرنگ کے علاوہ ٹیئر گیس اور پیلٹ گنوں کا بھی بھر پور استعمال کیا جس کے نتیجے میں 50سے زیادہ افراد زخمی ہو ئے جن میں سے 7شدید زخمیوں کو سرینگر کے مختلف اسپتالوں میں منتقل کیا گیا ،جہاں 18سالہ تمشیل احمد خان زخموں کی تاب نہ لاکر دم تو ڈ بیٹھا ۔ادھر ریاستی پو لیس کے سر براہ سہیش پال وید نے کندلن شو پیاں میں فورسز اور جنگجوئوں کے در میان پیش آئی جھڑپ کی تصدیق کرتے ہو ئے بتایا کہ معرکہ آرائی کے دوران 2جنگجوجاں بحق کئے گئے ،جبکہ جھڑپ کے دوران ایک افسر سمیت 2فوجی اہلکار بھی زخمی ہو ئے جنہیں علاج و معالجہ کے لئے فوجی اسپتال سرینگر منتقل کیا گیا ۔اس دوران امن و قانون کی صورتحال کو برقرار رکھنے کے لیے انتظامیہ نے منگلوار صبح سے ہی شوپیان اور ملحقہ علاقوں میں موبائل انٹرنیٹ سروس کو اگلے احکامات تک کے لیے معطل کردیا۔ادھر پولیس ترجمان نے جھڑپ کے حوالے سے بیان جاری کرتے ہوئے بتایا کہ منگلوار علی الصبح سیکورٹی فورسز کی مشترکہ جمعیت نے کندلن نامی گائوں کا مصدقہ اطلاع ملنے کی بنیاد پر محاصرہ عمل میں لایا جس دوران گھر گھر تلاشی کا آغاز کیا گیا۔ انہوں نے بتایا کہ جونہی فورسزاہلکار مشتبہ مکان کے نزدیک پہنچے تو مکان میں چھپے بیٹھے جنگجوئوں نے فورسز اہلکاروں پر شدید فائرنگ کی جس کی زد میں آکر ایک جے سی او سمیت 2فوجی اہلکار زخمی ہوئے۔ پولیس نے بتایا کہ گھماسان جھڑپ کے اختتام پر جیش محمد سے وابستہ 2جنگجوئوں کو ہلاک کیا گیا جن کی شناخت مقامی جنگجو سمیر احمد ڈار اور بابر جو کہ پاکستان کا رہنے والا ہے کے بطور کی گئی۔ انہوں نے کہا کہ ہلاک شدہ جنگجوئوں کے تحویل سے بھاری مقدار میں اسلحہ ضبط کیا گیا ۔اس دوران معلوم ہوا ہے کہ کنڈلن میں فوجی محاصرے کے دوران یہ افواہ پھیل گئی کہ حال ہی میں جنگجوئوں کی صف میں شمولیت اختیار کر نے والے زینت نائیکو فوجی محاصرے میں آگیا ہے جس کے نتیجے میں زینت نائیکو کے والد کو دل کا دورہ پڑ گیا اور وہ فوت ہو گیا ۔جنو بی ضلع شو پیاں کے کنڈ لن علاقے کو فوج کی34 راشٹریہ رائفلز، جموں وکشمیر پولیس کے اسپیشل آپریشن گروپ ﴿ایس او جی﴾ اور سینٹرل ریزرو پولیس فورس نے منگل کی صبح ایک مصدقہ اطلاع کی بنائ پر محاصرے میں لے لیا جس کے دوران یہاں جنگجوئوں اور فورسز اہلکاروں کے در میان دو بدو جھڑپ شروع ہو ئی جو کئی گھنٹوں تک جاری رہی ۔زرائع نے بتایا کہ سو موار کی صبح فورسز اہلکاروں نے بھاری تعداد میں یہاں پہنچ کر سخت محاصرا عمل میں لایا اور اس دوران جوں ہی فوجی اہلکاروں نے اس مکان کی طرف پیش قدمی کر نے کی کو شش کی جہاں جنگجو چھپے بیٹھے تھے تو مکان کے اندر مو جود جنگجوئوں نے فورسز اہلکاروں پر شدید فائرنگ کی جس کے نتیجے میں ایک جے سی او سمیت 2فوجی اہلکار زخمی ہو ئے جن میں سے ایک جے سی او بھی شامل ہے ۔نمائندے نے بتایا کہ اس دوران فوجی اہلکاروں نے اس مکان کو شدید مو ٹار شلنگ اور فائرنگ کا نشانہ بنایا جس میں عسکریت پسند مو جود تھے۔انہوں نے بتایا کہ مکان کو ملبے کے ڈھیر میں تبدیل کر نے کے کچھ دیر بعدفائرنگ کا سلسلہ رُ کہ گیا اور اس دوران جائے جھڑپ سے2جنگجوئوں کی لاشیں بر آمد کی گئیں جن میں سے ایک کی شناخت سمیر احمد شیخ ساکنہ عائیند راول پورہ شو پیاں کے بطور ظاہر کی گئی ایک پولیس افسر نے بتایا کہ دوسرے جنگجو کی شناخت کی جارہی ہے اور حلیہ سے بظاہر لگتا ہے کہ وہ غیر ملکی ہے ۔زرائع نے بتایا کہ جھڑپ شروع ہو نے کے ساتھ ہی نو جوانوں نے آپریشن میں رخنہ ڈالنے اور جنگجوئوں کو فرار کرانے کی کوشش کے تحت فورسز اہلکاروں پر شدید پتھرائو کیا اور اس دوران فورسز اہلکاروں نے تشدد پر اتر آئے نو جوانوں کو منتشر کر نے کے لئے ٹئیر گیس شلنگ ،پیلٹ اور فائرنگ کی جس کے نتیجے میں 50سے زیادہ شہری زخمی ہو ئے جن میں سے 7شدید زخمیوں کو سرینگر کے مختلف اسپتالوں میں منتقل کیا گیا جس دوران18سالہ تمشیل احمد خان و لد خو رشید احمد خان ساکنہ وہیل شو پیاں ایس ایم ایچ ایس اسپتال میں زخموں کی تاب نہ لاکر دم تو ڈ بیٹھا ۔ایس ایم ایچ ایس اسپتال زرائع نے کے این ایس کو بتایا کہ تمشیل احمد کے سر میں شدید زخم آئے تھے جس کے نتیجے میں وہ اسپتال پہنچتے ہی دم تو ڈ بیٹھا ۔اسپتال زرائع کے مطابق 7افراد کو گولیوں اور پیلٹ کی شدید چو ٹیں آئیں تھی جنہیں نازک حالت میں سرینگر منتقل کیا گیا جبکہ با قی زخمیوں کو سب ضلع اسپتال شو پیاں اور پلوامہ منتقل کیا گیا جہاں آخری اطلاعات ملنے تک ان کا علاج و معالجہ جاری تھا ۔ادھر معلوم ہوا ہے کہ منگل کی صبح جوں ہی کند لن میں فورسز اور جنگجوئوں کے بیچ گھمسان شروع ہوا تو حال ہی میں جنگجوئوں کی صف میں شمولیت اختیار کر نے والے ممندر شو پیاں سے تعلق رکھنے والے زینت الاسلام والد محمد اسحاق نائیکو پر غشی طاری ہو گئی ۔عینی شاہدین نے بتایا کہ سو موار صبح محمد اسحاق نائیکو کے گھر میں یہ اطلاع پہنچی کہ ان کا بیٹا زینت الاسلام کندلن میں فوجی محاصرے میں آگیا ۔اس دوران جنگجو نو جوان کے والد محمد اسحاق نائیکو کو اچانک دل کا دورہ پڑ گیا ۔اگر چہ اس دوران انہیں اسپتال لے جایا گیا تاہم ڈاکٹروں نے محمد اسحاق کو مر دہ قرار دے دیا ۔ضلع اسپتال شو پیاں میں تعینات ڈاکٹر ظہور نے بتایا کہ محمد اسحاق کو جوں ہی یہاں لایاگیا تو وہ دائی اجل کو لبیک کہہ گئے تھے ۔انہوں نے بتایا کہ محمد اسحاق کو دل کا شدید دورہ پڑ گیا تھا۔ اس دوران واقعہ کی اطلاع جوں ہی ممندر پہنچی تو یہاں صف ماتم بچھ گئی ۔ اس دوران معلوم ہوا ہے کہ جائے جھڑپ پر فورسز کے ساتھ دو بدو سنگ بازی میں 50سے زائد افراد پیلٹ ،ٹیئر گیس شلنگ اور فائرنگ کے نتیجے میں زخمی ہو ئے ۔ادھر واقعے کی خبر پھیلتے ہی جنوبی کشمیر کے پلوامہ ،کولگام اور اسلام آباد میں سکوت بپا ہوا جس دوران ان اضلاع میں تجارتی ،عوامی اور تعلیمی سر گر میاں متاثر رہیں ۔ادھر ریاستی پولیس کے سر براہ ڈاکٹر شیش پال وید نے کندلن میں پیش آئی جھڑپ کی تصدیق کر تے ہو ئے بتایا کہ جھڑپ کے دوران 2جنگجو مارے گئے جن کا تعلق جیش محمد کے ساتھ معلوم ہو تا ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ جائے جھڑپ سے 2جنگو ئوں کی لاشیں بر آمد کی گئی ہیں ۔جن میں سے ایک کی شناخت سمیر احمد شیخ ولد غلام محمد شیخ ساکنہ آئند راول پورہ شو پیاں کے بطور ہوئی ہے ۔اس دوران شوپیاں پولیس کے زرائع نے بتایا کہ دوسرے جنگجو کی شناخت جاری ہے تاہم وہ حلیہ سے بظاہر غیر ملکی معلوم ہو تا ہے ۔اس دوران امن و قانون کی صورتحال کو برقرار رکھنے کے لیے انتظامیہ نے منگلوار صبح سے ہی شوپیان اور ملحقہ علاقوں میں موبائل انٹرنیٹ سروس کو اگلے احکامات تک کے لیے معطل کردیا۔ ادھر پولیس ترجمان نے جھڑپ کے حوالے سے بیان جاری کرتے ہوئے بتایا کہ منگلوار علی الصبح سیکورٹی فورسز کی مشترکہ جمعیت نے کندلن نامی گائوں کا مصدقہ اطلاع ملنے کی بنیاد پر محاصرہ عمل میں لایا جس دوران گھر گھر تلاشی کا آغاز کیا گیا۔ انہوں نے بتایا کہ جونہی فورسزاہلکار مشتبہ مکان کے نزدیک پہنچے تو مکان میں چھپے بیٹھے جنگجوئوں نے فورسز اہلکاروں پر شدید فائرنگ کی جس کی زد میں آکر ایک جے سی او سمیت 2فوجی اہلکار زخمی ہوئے۔ پولیس نے بتایا کہ گھماسان جھڑپ کے اختتام پر جیش محمد سے وابستہ 2جنگجوئوں کو ہلاک کیا گیا جن کی شناخت مقامی جنگجو سمیر احمد ڈار اور بابر جو کہ پاکستان کا رہنے والا ہے کے بطور کی گئی۔ انہوں نے کہا کہ ہلاک شدہ جنگجوئوں کے تحویل سے بھاری مقدار میں اسلحہ ضبط کیا گیا ۔پولیس نے مزید بتایا کہ کراس فائرنگ کے نتیجے میں کئی افراد زخمی ہوئے جنہیں مختلف ہسپتالوں میں علاج و معالجہ کی غرض سے داخل کرایا گیا جہاں ان کی حالت بہتر بتائی جارہی ہے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں