فرانس فائنل میں ، بلجیم کو شکست

سینٹ پیٹرس برگ/یو این آئی/ ڈیفینڈر سیموئل اومیتی کے 51ویں منٹ میں ہیڈر سے کئے گئے شاندار گول کی بدولت فرانس نے بیلجیئم کو ایک صفر سے ہراتے ہوئے فیفا ورلڈ کپ فٹبال ٹورنامینٹ کے خطابی مقابلے میں جگہ بنالی۔اومیتی اس سیمی فائنل کے مین آف دی میچ رہے ۔ فائنل میں فرانس کامقابلہ انگلینڈ اور کروشیا کے مابین دوسرے سیمی فائنل کے فاتح سے ہوگا جبکہ بیلجیئم کی ٹیم تیسرے مقام کیلئے کھیلے گی۔عالمی کپ میں چھ مرتبہ سیمی فائنل کھیلنے والے فرانس کا یہ تیسرا فائنل ہے ۔اس سے پہلے وہ 1998اور 2006میں فائنل میں پہنچا تھا اور 1998میں وہ فاتح بنا تھا۔ورلڈ کپ کی تاریخ میں فرانس ایسی چھٹی ٹیم بن گیا ہے جس نے تین بار فائنل میں جگہ بنائی ہے ۔ جرمنی8، برازیل 6، اٹلی 6، ارجنٹینا 5اور ہالینڈ تین مرتبہ فائنل میں پہنچے ہیں۔دھڑکنوں کو تیز کرنے والے عالمی کپ کے پہلے سیمی فائنل میں فرانس کو اگرچہ ایک گول سے جیت ملی لیکن 1998میں اپنی میزبانی میں چیمپیئن رہنے والی فرانس کی ٹیم بیلجئیم سے بہتر ثابت ہوئی۔بیلجئیم نے موقع ضرور بنائے لیکن گول کرنے میں ناکام ثابت ہوئے ۔پہلے ہاف میں کوئی گول نہیں ہوسکا ۔میچ کے 51ویں منٹ میں اینٹوین گریجمین کے شاندار کارنر پر ڈیفینڈر اومیتی نے ہوا میں اچھلتے ہوئے جو ہیڈر لگایا وہ گول کیپر تبوت کورٹیس کو چھکاتے ہوئے گول میں سما گیا۔ فرانس نے اس ایک گول کی برتری کو آخر تک بچائے رکھا اور 2006 کے بعد پہلی مرتبہ فائنل میں مقام بنا لیا۔یلجیئم کی شروعات اچھی رہی۔ پال پوگبا نے کلین ایم باپے کو لمبی گیند دی جو تیزی سے باکس کی جانب بڑھ رہے تھے لیکن بیلجئیم کے گول کیپر کورٹیس نے آگے آتے ہوئے گیند کو اپنے قبضے میں لے لیا۔ میچ کے 16 ویں منٹ میں ڈی بریون نے گیند ہیزارڈ کو دی لیکن ان کا شاٹ پوسٹ کے قریب سے نکل گیا۔ چند منٹ بعد ہیزارڈ نے بائیں جانب سے زبردست ڈرائیو لگائی جو رافیل ورانے کی پیٹھ سے لگتی ہوئی پوسٹ کے اوپر سے چلی گئی۔ فرانس نے بھی مواقع بنائے ۔ اولیویر گیروڈ کا ہیڈر وائڈرہا جبکہ ایم باپے نے بنجامن پوارڈ کے لئے موقع بنایا لیکن ان کا شاٹ نیچے رہا اور گول کیپر کے پیر سے ٹکراگیا۔ پہلا ہاف دلچسپ رہا لیکن کوئی گول نہیں ہوا۔ اومیتی نے دوسرے ہاف میں اس تعطل کو توڑا۔ بیلجئیم کی برابری حاصل کرنے کی امیدیں ہر گزرتے منٹ کے ساتھ ٹوٹتی رہیں اور فرانس نے چھ منٹ کا خطرناک انجري وقت بھی نکال کر 12 سال بعد فائنل میں جگہ بنا لی۔دونوں کے درمیان یہ 74 واں مقابلہ تھا جس میں فرانس کو 25 مرتبہ سبقت حاصل ہوئی۔ بیلجئیم اس سے قبل 1986 کے سیمی فائنل میں ارجنٹینا سے ہارا تھا۔ اس ہار کے ساتھ رابرٹومارٹنیزکی ٹیم کا 23 میچوں میں ناقابل شکست رہنے کا تسلسل ٹوٹ گیا۔ اس سے پہلے اس کی آخری شکست یورو 2016 میں ویلز کے ہاتھوں کوارٹر فائنل میں ہوئی تھی لیکن یہ شکست بیلجیم کے لئے زیادہ دل توڑنے والی رہی۔
ٹکٹ بلیک کرنے پر فیفا کا ایکشن
فٹ بال کی عالمی تنظیم فیفا نے ورلڈ کپ کے میچز بلیک میں ٹکٹ فروخت کرنے والوں کے خلاف ایکشن لیتے ہوئے ماسکو اور سینٹرز پیٹرز برگ کے فیفا ٹکٹ سیلنگ سینٹر پر اپنے نمائندے تعینات کردیئے۔اس طرح ورلڈ کپ فٹ بال کے سیمی فائنل کے آغاز کے ساتھ ہی ٹکٹوں کی بلیک بھی دم توڑ گئی۔سینٹ پیٹرز برگ کے کرستوسکی اسٹیڈیم میں بلجیم اور فرانس کے میچ کی بہ نسبت تماشائیوںنے ماسکو کے لوزنیکی فٹ بال اسٹیڈیم میں انگلینڈ اور کروشیا کے میچ کو دیکھنے کیلئے ترجیح دی۔ ٹکٹ بلیک کرنے پر فیفا کا ایکشن سینٹ پیٹرز برگ کے سیمی فائنل کے میچز کیلئے پہلے ٹکٹ خریدنے والوں نے کم قیمت پر بھی ٹکٹ نکالنے میں عافیت جانی جبکہ سینٹ پیٹرز برگ کے سیمی فائنل کے ٹکٹ بھی خریدے گئے داموں پرفروخت ہوتے رہے۔ماسکو کے فیفا ٹکٹ سیلنگ سینٹر پر ٹکٹوں کی بلیک کی شکایت ملنے پر فیفا کے کوآرڈی نیٹر اور کیمرہ مین بھی موجود تھے جو اس بات کو یقینی بنارہے تھے کہ یہاں کوئی ٹکٹوں کی کوئی بلیک نہیں ہورہی ہے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں