انتخابات میں حصہ لینے کیلئے امیدوار نہیں مل رہے ہیں بی جے پی اور آر ایس ایس لالچ دیکر امیدواروں کی تلاش میں :سول سوسائیٹی

سرینگر/سیول سوسائیٹی کارڑنیشن کمیٹی نے بی جے پی اور آر ایس ایس کے طرز عمل پر تشویش ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ دونوںجماتیں ریاست کے تینوں خطے اور سرحدی علاقوں میں رہایش پزیر لوگوں کو مختلف مراعات اور مرکزی اسکیموں کا لالچ دیکر انتخابات میں حصہ لینے کی دعو ت دیکر انہیںاکسانے کی کوشش کر رہی ہیں چونکہ جموں کشمیر کی راے عامہ نے ان انتخابات میں شامل ہونے کی کوشش کو لا حاصل مشق قرار دیتے ہوئے چناؤمہم میں/جاری صفحہ نمبر ۱۱پر
 حصہ لینے سے انکار کر دیا ہے دونوں جماعتیں اچھی طرح جانتی ہیں کہ انہیں جموں کشمیر میں انتخابات میں امید وار دستیاب نہیں ہونگے اس لئے اب وہ متبادل امید واروں کی تلاش میں لوگوں کو لالچ دے رہی ہیں۔ سیول سوسائیٹی کارڈیشن کمیٹی نے کہا ہے کہ موجودہ نا مساعدحالات کے پیش نظر مرکزی حکومت گزشتہ دوسال سے اننت ناگ پارلیمانی حلقے کا الیکشن نہیںکرا سکی ہے ۔سپریم کورٹ میں اس وقت دفعہ35 A اوردفعہ370 زیر غورہے کشمیریوں کا تشخص انفرادیت اور شناخت کو پس پشت ڈال کر انتخابات کرانے کا کوئی اخلاقی جواز نہیں ہے سپریم کورٹ نے دفعہ35A کے سلسلے میں چار مہینے کا وقفہ دیا ہے جب تک سپریم کورٹ جموں کشمیر کے بارے میں حتمی فیصلہ صادر نہیںکرتی تب تک اس بارے میںسوچا نہیں جا سکتا۔ آر ایس ایس اور بی جے پی کشمیر کی آب و ہوا میں  ایندھن ڈال کر ریاست کو مذہبی اور علاقائی بنیاد پر تقسیم کرنے کے در پے ہے ۔سیول سوسائیٹی کارڑنیشن کمیٹی نے کانگریس کے صدر اور پارٹی کا اس بات کے لئے شکریہ ادا کیا ہے کہ انہوں نے بھی موجودہ حالات کے پیش نظر ان انتخابات سے دور رہنے کا فیصلہ کیا ہے ۔انشاللہ سیول سوسائیٹی کارڑنیشن کمیٹی کی کوشش رنگ لائی گی اور ریاستی عوام کے متحد ہو جانے کے سبب سپریم کورٹ بھی دفعہ 35 Aاور دفعہ 370 کر خارج کر دے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں