ڈی جی پی کا گورنر کیساتھ سیکورٹی صورتحال پر تبادلہ خیال انتخابات کی تیاریوں کے حوالے سے اعلیٰ سطحی اجلاس منعقد

سرینگر/ کے این ایس/ ریاستی پولیس کے نئے اور عبوری سربراہ دلباغ سنگھ نے سیکورٹی افسران کی اعلیٰ سطحی میٹنگ میں پنچایتی اور بلدیاتی انتخابات کے حوالے سے تیاریوں کا جائزہ لیا۔ اس موقعے پرڈائریکٹر جنرل نے ضلعی سپرانڈنٹنڈٹ آف پولیس اور ڈی آئی جیز کو ہدایت کرتے ہوئے الیکشن کو احسن اور پرامن طریقے سے منعقد کرانے کے لیے سیکورٹی کے کڑے بندوبست عمل میں لائے جائیں۔ /جاری صفحہ نمبر ۱۱پر
 ریاستی پولیس کے نئے ڈایریکٹر جنرل دلباغ سنگھ نے بدھوار کو پولیس کنٹرول روم میں سیکورٹی کے اعلیٰ افسران کی میٹنگ میں اکتوبر، نومبر اور دسمبر میں منعقد ہونے والے پنچایتی اور بلدیاتی انتخابات کو پرامن طور پر منعقد کرانے کے حوالے سے تیاریوں کا بھر پور جائزہ لیا۔ میٹنگ میں ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل آف پولیس ﴿ہیڈکوارٹرس﴾ عبدالغنی میر، انسپکٹر جنرل آف پولیس ﴿پرسنل﴾ جے پی سنگھ اور انسپکٹر جنرل آف پولیس ایس پی پانی موجود تھے۔ ڈی جی نے اس موقعے پر رواں سال کے آخر پر منعقد ہونے والے پنچایتی اور بلدیاتی انتخابات سے متعلق تیاریوں کا جائزہ لیتے ہوئے افسران کو خصوصی ہدیات جاری کیں۔ انہوں نے ضلعی ایس ایس پی اور ڈی آئی جی کو ہدایت کی کہ وہ پنچایتی اور بلدیاتی انتخابات کو پرامن طور پر منعقد کرانے کے لیے سیکورٹی کے کڑے بندوبست عمل میں لائیں۔ انہوں نے افسران کو زمینی سطح پر حالات کا جائزہ لینے کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ الیکشن کو منعقد کرانے کے لیے سیکورٹی کے حوالے سے جس نوعیت کی بھی افرادی قوت محکمہ کو درکار ہوگی اُس کے لیے خاطر خواہ انتظامات کئے جائیں گے۔اس موقعے پر ڈی جی پی نے افسران کو ہدایت کی کہ وہ الیکشن کو پرامن طور پر منعقد کرانے کے حوالے سے کسی بھی سطح پر مصلحت پسندی سے کام نہ لیں۔ادھر ریاستی پولیس کے سربراہ دلباغ سنگھ نے راج بھون میں گورنر ستیہ پال ملک کے ساتھ ملاقات کرکے انہیں سیکورٹی اور امن و قانون کی صورتحال کی جانکاری فراہم کی۔ ریاستی پولیس کے سربراہ دلباغ سنگھ نے بدھوار کو یہاں راج بھون میں گورنر ستیہ پال ملک کے ساتھ ملاقات کرکے انہیں سیکورٹی اور امن و قانون کی صورتحال کی جانکاری فراہم کی۔اس موقعے پر گورنر ستیہ پال ملک نے امن و قانون بنائے رکھنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے ریاست میں قائم اُن عمارتوں اور مقامات کے بارے میں ڈی جی پی کے ساتھ تبادلہ خیال کیا جنہیں تحفظ فراہم کیا جارہا ہے۔انہوں نے ایسی عمارتوں کے تحفظ کو برقرار رکھنے پر زور دیتے ہوئے مختلف سیکورٹی ایجنسیوں کے تال میل کی تلقین کی۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں