نگروٹہ ، سوپور اور کیرن سیکٹر میں خونریز معرکہ آرائیاں 8جنگجو نوجوان جاں بحق ، کئی اعلیٰ فوجی اور پولیس آفیسروں سمیت ایک درجن سے زیادہ زخمی سرینگر -جموں شاہراہ پر ہائی الرٹ، مسافر گاڑیوں اور مال بردار ٹرکوں کی تلاشیاں گرفتار کئے گئے ٹرک ڈرائیور اور کنڈکٹر سے مسلسل پوچھ گچھ

سرینگر/ عابد نبی/کے این ایس / کے این این / جے کے این ایس/ اے پی آئی / سی این آئی/ سی این ایس/ کیرن سے جموں تک فوج اور جنگجوئوں کے درمیان خونین تصادم آرائی کے دوران 8جنگجوئوں کو جاں بحق کردیا گیا جب کہ اس دوران دوبدو لڑائی میں سرینگر جموں شاہراہ پر ججر کوٹلی کے مقام پر طرفین کی شدید فائرنگ کے نتیجے میں ایس ڈی پی او نگروٹہ سمیت 8فورسز اہلکار بری طرح زخمی ہوگئے جنہیں فوری طور پر علاج و معالجے کی خاطر کٹرا کے ہسپتال میں داخل کرایا گیا۔ ادھر انتظامیہ نے امن وقانون کی صورتحال کو برقرار رکھنے کے لیے سوپور اور نگروٹہ ججر کوٹلی میں سخت پابندیاں عائد کی جس دوران یہاں اسکولوں اور کالجوں کو ایک روز کے لیے احتیاطی طور پر بند رکھنے کے احکامات صادر کئے گئے۔اس دوران انتظامیہ نے افواہ بازی پر لگام کسنے کے لیے سوپور اور ججبر کوٹلی نگروٹہ میں موبائل انٹرنیٹ سروس پر اگلے احکامات تک پابندی عائد کی۔ ٹنل کے آر پار اور لائن آف کنٹرول پر سیکورٹی فورسز اور جنگجوئوں کے مابین شدید نوعیت کی تصادم آرائیوں میں 8جنگجوئوں کو جاں بحق کیا گیا جبکہ اس دوران طرفین کے درمیان دو بدو لڑائی کے نتیجے میں سرینگر جموں شاہراہ پر ججرکوٹلی کے مقام پر گولیوں کے تبادلے میں ایک ایس ڈی پی او سمیت/جاری صفحہ نمبر ۱۱پر
 8فورسز اہلکار بری طرح زخمی ہوگئے۔ اطلاعات کے مطابق شمالی کشمیر کے سوپور علاقے میں اُس وقت گولیوں کا شدید تبادلہ عمل میں آیا جب یہاں 22آر آر، سی آر پی ایف اور ایس او جی کی بھاری جمعیت نے تیلی یان آرم پورہ نامی گائوں کا محاصرہ عمل میں لایا۔ نمائندے کے مطابق سیکورٹی فورسز کو مصدقہ اطلاع موصول ہوئی تھی کہ یہاں 2جنگجوئوں چھپے بیٹھے ہیں جس دوران فورسز کی بھاری جمعیت نے آرم پورہ نامی بستی کا گزشتہ شام محاصرہ عمل میں لایا ۔ نمائندے کے مطابق فورسز اہلکاروں نے اس موقعے پر آرم پورہ سمیت ملحقہ علاقوں کو کڑے محاصرے میں لیتے ہوئے تمام اندرون و بیرون راستوں پر فورسز کی اضافی ٹکڑیاں تعینات کی جبکہ اس دوران آرم پورہ کو آنے اور جانے والے تمام راستوں پر فورسز گاڑیوں کو تعینات کردیا گیا۔ نمائندے نے بتایا کہ فورسز کی تلاشی پارٹی نے جونہی تلیان آرم پورہ نامی بستی میں داخل ہوکر گھر گھر تلاشی کا باضابطہ آغاز کیا تو یہاں چھپے بیٹھے جنگجوئوں نے تلاشی پارٹی پر خودکار ہتھیاروں سے شدید فائرنگ کی جس کے ساتھ ہی علاقے میں جھڑپ کا باضابطہ آغازہوگیا۔ انہوں نے بتایا کہ اس موقعے پر فورسز اہلکاروں نے بھی جنگجوئوں کے خلاف مورچہ سنبھالتے ہوئے جوابی کارروائی کا اغاز کیا اور علاقے میں سیکورٹی کی مزید کمک طلب کرتے ہوئے جنگجوئوں کے خلاف حتی کارروائی کا آغاز کیا۔ انہوں نے بتایا کہ اس دوران رات کی تاریکی کے باعث طرفین کے درمیان گولیوں کی گن گرج تھم گئی تاہم صبح 4:30بجے کو بستی میں چھپے بیٹھے جنگجوئوں نے فورسز کے ناکے کو توڑنے کی خاطرگولیوںکا شدید استعمال کیا تاہم اس دوران فورسز اہلکاروں نے اپنے مورچے کو تنگ کرتے ہوئے جنگجوئوں کے منصوبوں کو ناکام بنایا۔ ادھر فوج جھڑپ سے متعلق تفصیلات فراہم کرتے ہوئے بتایا کہ تلیان آرم پورہ نامی بستی میں فوج اور جنگجوئوں کے درمیان شدید جھڑپ ہوئی جس دوران فورسز کی کارروائی کے نتیجے میں 2غیر ملکی جنگجو جاں بحق ہوئے۔ انہوں نے بتایا مارے گئے جنگجوئوں کی شناخت علی عرف اطہر اور ضیا ئ الرحمٰن ساکنان پاکستان کے بطور کی۔انہوں نے بتایا کہ مارے گئے جنگجوئوں کا تعلق کالعدم تنظیم جیش محمد سے ہیں۔ ادھر ایس ایس پی سوپور جاوید اقبال نے واقعے سے متعلق بتایا کہ سیکورٹی فورسز نے جونہی تلیان آرم پورہ نامی بستی کا محاصرہ عمل میں لایا تو یہاں چھپے بیٹھے جنگجوئوں نے فورسز پارٹی پر ہتھ گولہ داغا جس کے ساتھ ہی علاقے میں جھڑپ کا آغاز ہوا۔ ادھر پولیس نے مارے گئے جنگجوئوں کے حوالے سے بتایا کہ آرم پورہ میں مارا گیا جنگجو علی عرف اطہر سوپور میں گزشتہ سال ہوئے سرنگ دھماکے میں ملوث تھا جن میں پولیس کے 4اہلکار ہلاک ہوگئے تھے۔ انہوں نے بتایا کہ علی سپور دھماکے کا سرغنہ تھا جس نے بڑی مہارت کے ساتھ سرنگ دھماکے کو منصوبہ بند طریقے سے اختتام کو پہنچایا۔ ادھر انتظامیہ نے قصبے میں غیر یقینی حالات کے پیش نظر جمعرات کو تمام اسکولوں اور کالجوں میں تدریسی عمل معطل رکھنے کے احکامات صادر کئے جبکہ امن و قانون کی صورتحال کو برقرار رکھنے اور افواہ بازی پر روک لگانے کے لیے بھی انتظامیہ نے ضلع میں موبائل انٹرنیٹ سروس کو اگلے احکامات تک معطل رکھنے کا فیصلہ لیا۔ادھر سرینگر جموں شاہراہ پر ججرکوٹلی کے مقام پر گزشتہ روز فرار ہوئے جنگجوئوں کے ساتھ فورسز کا دوبارہ آمنا سامنا ہونے کے نتیجے میں باضابطہ طور پر جھڑپ شروع ہوئی جس میں 3جنگجوئوں کو جاں بحق کیا گیا۔ اطلاعات کے مطابق بدھوار کو ججر کوٹلی کے مقام پر سیکورٹی فورسز نے ایک ناکہ لگایا تھا جس دوران ایک ٹرک کو روکا گیاتاہم جونہی فورسز اہلکار ٹرک کے نزدیک پہنچے تو اس میں سوار جنگجوئوں نے فورسز اہلکاروں پر شدید فائرنگ کی جس دوران جنگجوئوں موقعے کا فائدہ اٹھا کر فرار ہونے میں کامیاب ہوئے تاہم یہاں موجود فورسز اہلکاروں نے جنگجوئوں کو ڈھونڈ نکالنے کی خاطر ہائی الرٹ جاری کردیا جبکہ شاہراہ پر متعدد مقامات پر گاڑیوں کی باریک بینی سے تلاشی کا اغاز کیا گیا۔ ذرائع نے بتایا کہ جمعرات کی صبح جونہی فوج، سی آر پی ایف اور جموں کشمیر پولیس کی بھاری جمعیت نے ججر کوٹلی اور ملحقہ علاقوں میں تلاشی آپریشن شروع کیا تواسی دوران ان کا جنگجوئوں کے ساتھ آمنا سامنا ہوا جس کے بعد جنگجوئوں نے تلاشی پارٹی پر خودکار ہتھیاروں سے زبردست فائرنگ شروع کی۔ انہوں نے بتایا کہ فورسز کو مصدقہ اطلاع موصول ہوئی تھی گزشتہ روز ٹرک سے 2جنگجو فرار ہوئے تھے اور امید کی جارہی تھی تینوں جنگجو نزدیکی جنگلاتی خطے میںپناہ لیے ہوئے ہوں گے۔ نمائندے کے مطابق اس دوران جمعرات کی صبح جونہی فورسز کی مشترکہ جمعیت نے علاقے کی جنگلاتی خطے کا باریک بینی سے تلاشی ابھیان شروع کیا تو یہاں جھاڑیوں میں چھپے بیٹھے جنگجوئوں نے فورسز پر فائرنگ کی جس کے ساتھ ہی طرفین کے مابین گولیوں کا پھر سے تبادلہ ہوا۔ انہوں نے بتایا کہ اس دوران فورسز اہلکاروں نے جنگلاتی آراضی کو چاروں اطراف سے کڑے محاصرے میں لیتے ہوئے جنگجوئوں کے لیے راستے مسدود کردئے جبکہ علاقے میںفورسز کی بڑی تعداد طلب کی گئی۔ انہوں نے بتایا کہ اس دوران جنگلاتی خطہ گولیوں کی گن گرن سے دہل اٹھا ۔ انہوں نے بتایا کہ جھڑپ کے دوران ابھی تک 2جنگجوئوں کو جاں بحق کردیا گیا جبکہ جنگجوئوں کی فائرنگ کے نتیجے میں 8فورسز اہلکار بھی بری طرح مضروب ہوئے۔ پولیس ذرائع نے جھڑپ کے حوالے سے بتایا کہ سیکورٹی فورسز کی بھاری جمعیت نے کٹریال جنگلاتی اراضی کا کڑا محاصرہ عمل میں لاتے ہوئے جنگجووئں کے خلاف بڑے پیمانے پر آپریشن شروع کردیا ۔ انہوں نے بتایا کہ تلاشی پارٹی نے جونہی جنگلاتی آراضی کی طرف پیش قدمی کی تو یہاں چھپے بیٹھے جنگجوئوں نے فورسز پارٹی پر اندھا دھند فائرنگ کی جس کے نتیجے میں 8فورسز اہلکار بری طرح زخمی ہوگئے جن میں ایس ڈی پی او نگروٹہ موہن لعل شرما سمیت 2پولیس اہلکار اور 5سی آر پی ایف اہلکار شامل ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ سبھی زخمی اہلکاروں کو کٹرا کے نارائن ہسپتال منتقل کیا گیا ہے جہاں اُن کا علاج و معالجہ جاری ہے۔ ادھر جی او سی یونیفارم فورس میجر جنرل اروند بھاٹیہ نے تفصیلات فراہم کرتے ہوئے کہا کہ جھڑپ کے دوران اب تک 2جنگجوئوں کو مار گرایا گیا۔ انہوں نے بتایا کہ مارے گئے جنگجوئوں حال ہی میں سانبہ کے بوبیان سیکٹر سے اس پار داخل ہونے میں کامیاب ہوئے تھے۔ انہوں نے بتایا کہ مارے گئے جنگجو کسی بڑی کارروائی کو انجام دینے کے لیے اس پار داخل ہوئے تھے تاہم فوج اور فورسز کی بروقت کارروائی کے نتیجے میں ان کے منصوبوں کو ناکام بنایا گیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ جس ٹرک میں دونوں جنگجو ججر کوٹلی تک پہنچنے میں کامیاب ہوئے اس کا ڈرائیور اور کنڈیکٹر اور گرائونڈ ورکرز ہیں۔اس دوران انتظامیہ نے نگروٹہ ججر کوٹلی شاہراہ پر ٹریفک کی نقل و حرکت کو مکمل طور پر بند کرنے کے ساتھ ساتھ ٹکری زون کے تحت آنے والے تعلیمی اداروں کو بھی احتیاطی طور پر بند رکھا گیا۔ادھر سرحدی ضلع کپوارہ کے کیرن سیکٹرمیں فوج اور جنگجوئوں کے درمیان گولیوں کا شدید تبادلہ ہوا جس کے نتیجے میں 3جنگجوئوں کو جاں بحق کیا گیا۔ کشمیرنیوز سروس ﴿کے این ایس﴾ کے مطابق سرحدی ضلع کپوارہ کے کیرن سیکٹر میں فوج اور جنگجوئوں کے مابین اُس وقت گولیوں کا شدید تبادلہ ہوا جب فوج کی3جیکلائی سے وابستہ اہلکاروں کا دات گلی بلبیر پوسٹ کے مقام پر جنگجوئوں کے ساتھ آمنا سامنا ہوا۔ ذرائع نے بتایا کہ اس موقعے پر جنگجوئوں نے فورسز پارٹی پر خودکار ہتھیاروں سے فائرنگ کی جس کے ساتھ ہی علاقے میں گولیوں کی گن گڑاہٹ شروع ہوئی۔ ذرائع نے بتایا کہ فورسز اہلکاروں نے اس موقعے پر مورچہ سنبھالتے ہوئے جنگجوئوں کو زیر کرنے کے لیے بڑے پیمانے پر آپریشن شروع کردیا جس کے نتیجے میں 3جنگجوئوں کو جاں بحق کردیا گیا۔ سرکاری ذرائع نے جھڑپ سے متعلق جانکاری فراہم کرتے ہوئے کہا کہ جمعرات کی صبح 10:40بجے 3جیکلائی سے وابستہ اہلکاروں کا بلبیر پوسٹ کے مقام پر جنگجوئوں کے ساتھ آمنا سامنا ہوا۔ انہوں نے بتایا کہ جنگجوئوں کا ایک گروپ اس پار دراندازی کرنے تاک میں تھا کہ اسی دوران فورسز کی بروقت کارروائی سے اُن کی نقل و حرکت کو بھانپا گیا۔ انہوںنے بتایا کہ اس موقعے پر جنگجوئوں نے فورسز پارٹی پر شدید فائرنگ کی جس کا مؤثر جواب دیا گیا۔ انہوں نے بتایا کہ طرفین کے درمیان گولیوں کے تبادلے کے نتیجے میں 3جنگجوئوں کو مارا گیا تاہم انہوں نے بتایا کہ تینوں جنگجوئوں کی نعشیں سرحدی علاقے میں پڑی ہوئی ہے جنہیں ابھی تک بازیاب نہیں کیا گیا۔ذرائع نے بتایا کہ علاقے میں مزید جنگجوئوں کو ڈھونڈ نکالنے کی خاطر تلاشی آپریشن جاری ہے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں