بانڈی پورہ میں سسرال والوں کے ہاتھوں بہو کا قتل - پولیس نے خاتون کے شوہر اور دیگر رشتہ داروں کو گرفتار کیا

سرینگر / جے کے این ایس/عابد نبی/عازم جان/اہم شریف بانڈی پورہ میں سسرال میں تین بچوں کی ماں جھلس کر لقمہ اجل بن گئی۔ خاتون کے والدین نے الزام لگایا کہ سسرال والوںنے اُن کی بیٹی کا قتل کیا ۔ پولیس نے خاتون کے شوہر سمیت کئی افراد کو پوچھ تاچھ کے سلسلے میں گرفتار کیا ۔ اہم شریف بانڈی پورہ میں تین بچوں کی ماں پُرا سرار طورپر جھلس گئیں اور بعد میں اُس کی موت واقع ہوئی ۔ اسپتال ذرائع کے مطابق خاتون کوبری حالت میں اسپتال لایا گیا اور بعد میں وہ زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسی ۔ خاتون کی والدین نے بتایا کہ آٹھ برس قبل انہوںنے اہم شریف بانڈی پورہ میں بیٹی کی شادی کی اور پہلے ہی روز سے اُن کی بیٹی کو مختلف بہانوں سے زد کوب کیاجارہا تھا۔ والدین کا مزید کہنا تھا کہ ہمارے پاس پختہ ثبوت ہیں کہ اُن کی بیٹی کو سسرال والوں نے قتل کیا ہے۔ معلوم ہوا ہے کہ جس اسپتال میں خاتون کو بھرتی کیا گیا و ہ وہاں پر بطور نرس اپنی خدمات انجام دے رہی تھی ۔ پولیس ذرائع کے مطابق اس سلسلے میں کیس درج کرکے تحقیقات شرورع کی گئی ہے اور سسرال والوں کو پوچھ تاچھ کے سلسلے میں پولیس اسٹیشن طلب کیا گیا ۔ ادھر بانڈی پورہ میں ہیلتھ محکمہ کے طبی اور نیم طبی عملہ سے وابستہ ملازمین نے احتجاجی مظاہرئے کئے اور نرس کی ہلاکت میں ملوث افراد کو کیفرکردار تک پہنچانے کا مطالبہ کیا ۔ احتجاج کرنے والے ملازمین کے مطابق سسرال والوں نے خاتون پر تیل چھڑک کر اُس کا بہیمانہ طریقے سے قتل کیا ہے۔ نمائندے کے مطابق نسو سے گلستان چوک بانڈی پورہ تک ملازمین نے احتجاجی ریلی نکالی اور ملوث سسرا ل والوں کو گرفتار کرنے کا مطالبہ کیا ۔ گلشن چوک میں نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے ملازمین نے بتایا کہ اس سلسلے میں اعلیٰ سطحی تحقیقاتی ٹیم تشکیل دی جائے تاکہ لواحقین کو انصاف مل سکے۔ احتجاج کے باعث گلشن چوک بانڈی پورہ میں ٹریفک کی آمدورفت معطل ہو کررہ گئی ۔ پولیس نے مظاہرین کویقین دلایا کہ معاملے کی نسبت کیس درج کیا گیا ہے اور جوکوئی بھی اس ضمن میں ملوث قرار پائے گا اُس کے خلاف سخت کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں