انتخابات کے بارے میں حقائق عوام پرعیاں لوگ الیکشن عمل سے لاتعلق رہے :مزاحمتی قیادت

سرینگر/مشترکہ مزاحمتی قیادت سید علی شاہ گیلانی ،میرواعظ ڈاکٹر مولوی محمد عمر فاروق اورمحمد یاسین ملک نے دوران خانہ و تھانہ نظر بندی اپنے ایک بیان میںکہا ہے کہ کشمیری عوام نے ایک بار پھر نام نہاد بلدیاتی انتخابات سے لا تعلق رہ کر اور بے مثال احتجاجی/جاری صفحہ نمبر ۱۱پر
 ہڑتال کے ذریعے اسے مسترد کردیا ہے۔ قائدین نے کہا کہ نام نہاد انتخابات کے نتائج سے پہلے ہی سرینگر شہر میئر بنانے کے حوالے سے اعلان ، انتخابات کو صبح 6 بجے سے منعقد کرانا، فوجی جمائو میںمزید تقویت اور انٹرنیٹ پر پابندی اور حریت پسند نوجوانوں کی اندھا دھند گرفتاریوں نے ان نام نہاد انتخابات کی حقیقت عوام کے سامنے کھول کر رکھ دی ہے۔ انہوں نے کہا گذرتے انتخابی مرحلوں کے ساتھ ساتھ ان انتخابات کی حقیقت دنیا کے سامنے بے نقاب ہوتی جا رہی ہے۔قائدین نے کہا کہ در حقیقت ان انتخابات کا مقصد یہاں کی سنگین ،سیاسی اورزمینی صورتحال کو توڑ مروڑ کے دنیا کے سامنے پیش کرنا ہے تاکہ اس بات کا تصور دیا جائے کہ کشمیر میں ہندوستان کی جمہوریت کام کررہی ہے اور دیرینہ تنازعہ کشمیر کے مستقل حل میں مزید رکاوٹیں لائی جائیں۔ قائدین نے کہا کہ حکومت ہندستان ہر وہ حربہ استعمال کررہی ہے جس کے ذریعہ جموںوکشمیر کی متنازعہ حیثیت اور ہیئت کو تبدیل کیا جائے یا اس کو زک پہنچائی جائے جبکہ حقیقت یہ ہے کہ کشمیر ایک دیرینہ متنازعہ مسئلہ ہے اور یہ تب تک رہے گا جب تک کہ اس تنازعہ کو یہاں کے عوام کی خواہشات کے عین مطابق حل نہیں کیا جاتا۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں