خود کشی کی دھمکی دینے والے مہنت پرمہنس پولیس حراست میں

اجودھیا﴿یواین آئی﴾ اجودھیا کے تنازعہ کے26ویں برسی پردسمبر سے قابل اگر رام مندر کی تعمیر کا آغاز نہ ہونے پرخود کشی کی دھمکی دینے والے مہنت پرمہنس داس کو پولیس نے منگل کو اپنی حراست میں لے لیا ہے ۔پولیس نے بتایا کہ متنازعہ زمین پر رام مندر کی تعمیر کے سلسلے میں تپسوی چھاونی کے مہنت پرمہنس داس اپنے آشرم کے سامنے واقع اشوک درخت کے نیچے ایک چتا بنا کر خودکشی کرنے کی دھمکی دی تھی۔ جس کو ضلع انتظامیہ نے ہٹا دیا تھا لیکن پرمہنس داس کے دوبارہ خودکشی کی دھمی دینے پر پولیس نے انہیں اپنی حراست میں لے کرچیف جوڈیشیل مجسٹریٹ﴿سی جی ایم ﴾ کے سامنے پیش کیا ہے ۔ مجسٹریٹ نے 14دنوں کی عدالتی حراست میں رکھتے ہوئے جیل بھیج دیاہے ۔قابل ذکر ہے کہ مندر تعمیر کو سلسلے میں تپسوی چھاونی کے مہینت پر مہینس داس اپنے آشرم کے سامنے لگے اشوک کے درخت کے نیچے یکم اکتوبر سے تاحیات بھوک ہڑتال پر بھی بیٹھے تھے ۔ لیکن انکی حالت بگڑنے پر پولیس انتظامیہ نے 7اکتوبرکو انہیں لکھنؤ کے پی جی آئی میں علاج کے لئے داخل کرایا تھا۔ 5دنوں تک پی جی آئی میں زیر علاج رہنے کے بعداجودھیا کے ممبرا سمبلی وید پرکاش گپتا انہیں اپنے ساتھ اترپردیش کے وزیر اعلی یوگی آدتیہ ناتھ کے پاس لے جاکر تاحیات بھوک ہڑتال کو ختم کرایا تھا۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں