غیر ملکیوں کو واپس بھیجنے کیلئے حکومت فوری اقدام کرے :کمیشن

نئی دہلی﴿یو این آئی﴾ شہریت ترمیمی بل 2016 پر تشکیل جوائنٹ پارلیمنٹری کمیٹی ﴿جے پی سی﴾ نے ملک میں غیر قانونی طریقے سے رہنے والے ٰغیر ملکیوں کو قومی سلامتی کے لیے خطرہ قرار دیتے ہوئے انھیں واپس بھیجنے کی سست رفتاری پر تشویش ظاہر کی ہے اورکہا ہے کہ حکومت اس مسئلے پر فوری اقدام کرے ۔ کمیشن کی جانب سے کل پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں میں رپورٹ پیش کی گئی۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ غیر ملکی ٹریبونل نے 1986 سے اب تک 90 ہزار سے زائد ایسے غیر ملکیوں کی شناخت کی ہے جو یہاں غیر قانونی طریقے سے رہ رہے ہیں۔ ان میں سے محض 2400 افراد کو ہی ان کے ملک واپس بھیج دیا گیا ہے جبکہ دیگر کو مختلف وجوہات کی بنیادپر واپس نہیں بھیجا جا سکا ہے ۔ کمیشن نے کہا ہے کہ وہ غیر قانونی طریقے سے رہنے والے غیر ملکیوں کو واپس بھیجنے کے انتظام سے غیر مطئن ہے اور حکومت کو اس سمت میں فوراً ضروری اقدام کرنا چاہیے ۔ کمیشن نے اس بات پر تشویش ظاہر کی ہے کہ ملک میں بڑی تعداد میں غیر قانونی بنگلہ دیشی رہ رہے ہیں، ان میں سے کچھ ایسی سرگرمیوں میں ملوث رہے ہیں جو قومی سلامتی کے پیش نظر خطرناک ہیں۔ کمیشن کا ماننا ہے کہ قومی سلامتی کا مسئلہ انسانی امدادسمیت تمام پہلوؤں کے مقابلے میں سب سے بڑھ کر ہے ۔ اس نے کہاہے کہ غیر ملکیوں کے غیر قانونی طریقے سے ملک میں آنے اور ان کی در اندازی پر فوراً قدغن لگائی جانی چاہیے ۔ کمیشن کا ماننا ہے کہ غیر قانونی شہریوں کے داخلے کو کسی بھی بنیاد پر یا کسی بھی دلیل سے جائز نہیں ٹھہرایا جا سکتا۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں