کروشیا اور اسرائیل کے درمیان لڑاکا طیارہ معاہدہ التوا میں پڑا

زغرب﴿ژنہوا﴾ کروشیا نے کہا ہے کہ امریکہ کی طرف سے منظوری نہ مل پانے کی وجہ اسرائیل۔کروشیا کا لڑاکا طیاروں کا معاہدہ التوا میں پڑ گیا ہے ۔ امریکی اجازت نہ ملنے کی وجہ سے اسرائیل، کروشیا کو لڑاکا طیارے ایف -16 فروخت نہیں کر رہا ہے ۔کروشیا کے وزیر دفاع دمر کرسٹے سیوک نے جمعرات کو عراق کی وزارت دفاع کے وفد کے ساتھ ملاقات کے بعد کہاکہ ‘‘اسرائیل نے کروشیا کی وزارت دفاع کو اطلاع دی ہے کہ لڑاکا طیارے فروخت کرنے کے لئے امریکہ کی منظوری نہیں مل پائی ہے ۔ وزارت اب حکومت کو نئے قدم کرنے کی تجویز دے گی۔ معاہدے کے مطابق طیاروں کی خریداری نہ ہو پانے کے لئے کروشیا ذمہ دار نہیں ہے ۔اسرائیل کے وزارت دفاع کے ڈائریکٹر جنرل نے کہاکہ ‘‘معاہدہ کے مطابق خریداری نہ ہو نے کے لئے کروشیا ذمہ دار نہیں ہے ۔ اسرائیل ، طیارے تیسری پارٹی کو دینے کے لئے اجازت حاصل نہیں کر سکا ہے ۔کروشیا نے اپنی فوج کو جدید بنانے کے مقصد سے گزشتہ سال مارچ میں اسرائیل کے استعمال کردہ ایف ۔16 لڑاکا طیارے خریدنے کا معاہدہ کیا تھا۔ معاہدے کے مطابق تقریبا 3.1 ارب کونا (47.9 ملین امریکی ڈالر﴾ کی رقم کے بدلے 25۔30 سال پرانے 12 جدید ایف ۔16 لڑاکو طیارے خریدنے کا معاہدہ ہوا تھا۔ امریکہ نے دسمبر میں زور دیکر کہا ا تھا کہ اسرائیل کے لڑاکا طیاروں کو کسی بھی تیسرے ملک کو فروخت کرنے سے پہلے اسرائیلی فضائیہ لڑاکو طیاروں میں کی گئی اپ گریڈیش کو ہٹائے گی۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں