نئی دلی کو کسی بھی صورت میں کشمیریوں اور پاکستان کے ساتھ بات چیت کرنی ہے : فاروق عبداللہ

سرینگر//﴿آفتاب ویب ڈیسک ﴾  نیشنل کانفرنس کے صدر و رکن پارلیمان ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے بات چیت اور افہام و تفہیم کو جموں وکشمیر میں مکمل امن و امان کی واحد ضمانت قرار دیتے ہوئے کہا کہ نئی دلی کو کسی بھی صورت میں کشمیریوں اور پاکستان کے ساتھ بات چیت کرنی ہے کیونکہ اسی صورتحال میں روشن اور تابناک مستقبل کی راہیں تلاش کی جاسکتی ہیں۔ انہوں نے کہ کشمیریوں کے دل جیتنا اور کشمیریوں کی عزت اور وقار بحال کرنا وقت کی اہم ضروری ہے ۔ اگر فوجی سربراہ طالبان کے ساتھ غیر مشروط مذاکرات کی حمایت کرتے ہیں تو پھر کشمیر میں بات چیت کا راستہ اپنانے سے کیوں گریز کیا جارہا ہے ؟انہوں نے کہا کہ چھاپہ مار کارروائیوں، مار دھارڈ اور ظلم ڈھانے سے حالات ٹھیک نہیں ہوسکتے ۔ کشمیر ایک سیاسی مسئلہ ہے اور مرکز کو ایسی کوشش کرنی چاہئے جس سے امن بحال ہو اور لوگوں میں اطمینان آئے تاکہ ریاست کے عوام امن اور چین کی زندگی گزار سکیں۔ان باتوں کااظہار فاروق عبداللہ نے ہفتہ کے روز جنوبی کشمیرکے اننت ناگ میں پارٹی عہدیداروں کے ایک اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ فاروق عبداللہ نے کہاکہ اگر نیشنل کانفرنس کی حکومت آئی تو ہم یہاں سخت گیر پالیسیوں کی اجازت نہیں دیں گے لیکن یہ تب ہی ممکن ہے جب ہمیں مضبوط مینڈیٹ ملے گا، ٹوٹی پھوٹی حکومت میں ایسا کر پانا مشکل ہے ۔ 1996میں جب ہم واضح اکثریت کے ساتھ آئے تو ہم نے یہاں سب کچھ نئے سرے سے شروع کیا اور ہمیں اس میں کافی حد تک کامیابی ملی۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں