لداخ صوبے کے ہیڈکوارٹر کا معاملہ

ضلع کرگل میں مکمل ہڑتال، جموں میں بڑے پیمانے کا احتجاج

سرینگر//﴿آفتاب ویب ڈیسک ﴾ لداخ کے مسلم اکثریتی ضلع کرگل میں پیر کے روز ریاستی گورنر ستیہ پال ملک کے مبینہ یکطرفہ فیصلے جس کے تحت نوتشکیل شدہ صوبہ لداخ کے تمام مرکزی دفاتر ضلع لیہہ میں کھولیں جائیں گے، کے خلاف مکمل ہڑتال کی گئی۔ ہڑتال کے دوران قصبہ کرگل اور تمام مضافاتی علاقوں میں دکانیں اور تجارتی مراکز بند رہے جبکہ سڑکوں پر گاڑیوں کی آمدورفت معطل رہی۔ سرکاری دفاتر اور بینکوں میں بھی معمول کا کام کاج بری طرح متاثر رہا۔ ہڑتال کی کال ضلع میں سرگرم تمام سیاسی، مذہبی اور سماجی تنظیموں کی طرف سے تشکیل دی گئی ’مشترکہ مزاحمتی تحریک کرگل‘ نے دی تھی۔ ادھر جموں میں پیر کی صبح کرگل سے تعلق رکھنے والے سینکڑوں افراد اور ان کے لیڈران نے گورنر موصوف کے حالیہ فیصلے کے خلاف احتجاجی ریلی نکالی۔ وزارت روڑ پر واقع کربلا کمپلیکس سے برآمد ہوکر پریس کلب کے سامنے اختتام پزیر ہونے والی اس ریلی کے شرکائ نے نو تشکیل شدہ صوبے کے تمام دفاتر کرگل اور لیہہ میں ففٹی ففٹی کی بنیادوں پر قائم کرنے کا زوردار مطالبہ کیا۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں