این آئی اے کی جانب سے سادھوی پرگیہ کو کلین چٹ دینا غلط : خصوصی جج

ممبئیâیو این آئیá مالیگاؤں 2008بم دھماکہ معاملے کی کلیدی ملزمہ سادھوی پرگیہ سنگھ ٹھاکر کے الیکشن لڑنے کے خلاف ممبئی کی خصوصی این آئی اے عدالت میں داخل پٹیشن کو کل عدالت نے یہ کہتے ہوئے خارج کردیا کہ کسی کو الیکشن لڑنے سے روکنا اس کے دائرہ اختیار میں نہیں، نیز عدالت نے قومی تفتیشی ایجنسی کی جانب سے سادھوی پرگیا سنگھ ٹھاکر کو کلین چٹ دیئے جانے کا بیان دینے پر سخت برہمی کا اظہار کیا اور کہا کہ بھلے ہی قومی تفتیشی ایجنسی نے ملزمہ کو کلین چٹ دی ہو لیکن عدالت نے اسے مقدمہ سے ڈسچارج نہیں کیا ہے کیونکہ عدالت کو لگتا ہے کہ اس کے خلاف ثبوت و شواہد موجود ہیں۔ خصوصی این آئی اے عدالت کے جج ونود پڈالکر نے فریقین کے دلائل کی سماعت کے بعد میڈیا کے نمائندے اور فریقین کے وکلائ سے بھرے ہوئے عدالتی کمرے میں اپنا فیصلہ صادر کیا جس کے مطا بق عدالت کو کسی بھی ملزم کو الیکشن لڑنے سے روکنے کا اختیار نہیں ہے کیونکہ دوران الیکشن کسی بھی طرح کے الیکشن معاملات میں دخل اندازی نہیں کرسکتی نیز جہاں تک ملزمہ کی عدالت سے غیر حاضری کا سوال ہے تو ملزمہ کے وکلائ اس کی غیر حاضری کے تعلق سے عدالت کو روزانہ مطلع کرکے اجازت حاصل کرتے ہیں لیکن جب بھی عدالت کو محسوس ہوگا کہ ملزمہ کی ضرورت ہوگی اسے عدالت میں آنا پڑیگا۔عدالت نے این آئی اے کے وکیل اویناس رسال کی جانب سے ملزمہ کو کلین چٹ دیئے جانے کا ذکر کرنے پرسخت برہمی کا اظہار کیا اور اپنے فیصلہ میں کہا کہ این آئی اے کا یہ کہنا غیر واجب ہے کیونکہ اسی عدالت نے اس کے خلاف چارج فریم کرکے مقدمہ شروع کردیا ہے جس میں ابتک /۱۰۴ سرکاری گواہوں نے اپنے بیانات کا اندراج کراچکے ہیں۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں