سرکار کی طر فسے طلبائ کو مظفر آباد کے کالجوں میں داخلہ- نہ لینے کی ہدایت پر میرواعظ کا اظہار برہمی

 سرینگر/حریت کانفرنس ع کے چیئرمین میرواعظ عمر فاروق نے حکومت کی طرف سے جموں کشمیر کے طالب علموں کو پاکستان کے زیر انتظامیہ کشمیر میں قائم تعلیمی اداروں میں داخلہ نہ لینے کی ہدایات کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ یہ بدقسمتی کی بات ہے کہ اب حصول تعلیم کو بھی سیاست کاری کا شکار بنایا جانے لگا ہے حالانکہ طالب علموں کو دنیا میں کہیں پر بھی تعلیم پانے کا حق ہے۔ انہوں نے کہا ان ہدایات سے ان طالب علموں کا مستقبل بھی مخدوش ہوکررہ گیا ہے جو پہلے سے ہی وہاں زیر تعلیم ہےں۔ میرواعظ نے کہ کہ دنیا پھر کے طالب علموں کی طرح کشمیر کے طالب علموں کو بھی جہاں چاہئے تعلیم حاصل کرنے کا حق ہے اور اُن کو پاکستان کے زیر انتظام کشمیر جو کہ جموں کشمیر کا حصہ ہے اور اس وجہ سے وہاں کے مستقل باشندے ہیں کےلئے ایسی ہدایت جاری کرنے کا کوئی جواز نہیں۔ میرواعظ نے کہا کہ ایل او سی ، آر پار تجارت کو معطل کرنے کے فیصلے سے پہلے ہی یہاں کی اقتصادیات اور تاجروں کو کافی نقصان اٹھانا پڑرہا ہے اور اب منفی ہدایات جاری کرکے طالب علموں کیساتھ کھلواڑ کیا جارہا ہے۔ میرواعظ نے ارباب اقتدار سے کہا ہے کہ وہ کشمیری طالب علموں کےساتھ سیاست گری کرنے سے اجتناب کریں اور ایسے ہدایات کو واپس لے لیں۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں