ملکی اور غیر ملکی سیاحوں کو کشمیر کی طرف راغب کرنے  میں سرکار ناکام، مہم چلانے کیلئے مختص چار کروڑ روپے بھی لیپس ہو گئے

سرینگرññ جے کے این ایسñملک کی دیگر ریاستوں اور بین الاقوامی ممالک میں سیاحوں کو کشمیر کی اور راغب کرانے کی خاطر حکومت کی جانب سے مختص چار کروڑ روپیہ لیپس ہو گئے ہیں۔ معلوم ہوا ہے کہ محکمہ ٹورازم نے ملک کی دیگر ریاستوں میں بیداری مہم نہیں چلائی جس کے نتیجے میں کشمیر میں رواں برس کا سیاحتی سیزن تباہ ہو گیا ۔  ریاست خاص کرو ادی کشمیر کی اور سیاحوں کو راغب کرانے کی خاطر ہر سال ملک کی مختلف ریاستوں اور دیگر ممالک میں بیداری مہم چلائی جاتی ہیں تاکہ ملکی اور غیر ملکی سیاحوں کی توجہ کشمیر کی اور مبذول کرائی جاسکے۔ معلوم ہوا ہے کہ حکومت کی جانب سے بیداری مہم کیلئے مختص 3کروڑ روپیہ لیپس ہو گئے ہیں ۔ ذرائع نے بتایا کہ محکمہ ٹورازم نے رواں برس کسی بھی ریاست میں بیداری مہم نہیں چلائی جس کا ثمرہ یہ نکلا کہ سیاح وادی آنے سے قاصر ہے کیونکہ نیوز چینلوں کی جانب سے منفی پروپگنڈا کرنے کے باعث ملک کے سیلانی وادی آنے سے قاصر رہے۔ ذ رائع نے بتایا کہ حکومت نے بیداری مہم چلانے کیلئے پیسے بھی مختص رکھے تاہم حیرانگی اس بات کی ہے کہ ان پیسوں کو خرچ ہی نہیں کیا گیا ۔ ذرائع کہنا ہے کہ سابق ڈائریکٹر ٹورازم نے اس محکمہ میں روح پھونکنے کیلئے بہت کام کئے یہاں تک کہ ملک کی مختلف ریاستوں میں بیداری مہم چلائی تاہم موجودہ ٹورازم انتظامیہ ملکی اور غیر ملکی سیاحوں کو کشمیر کی اور راغب کرانے میں مکمل طورپر ناکام ثابت ہوئی یہاں تک کہ بیداری مہم کیلئے مختص رقم بھی لیپس ہو گئی ہے۔ عوامی حلقوں نے ٹورازم محکمہ کو آڑے ہاتھوں لیتے ہوئے کہاکہ یہ محکمہ سیاحوں کووادی کی اور راغب کرانے میں مکمل طورپر ناکام ثابت ہو گیا ہے۔ عوامی حلقوں نے بتایا کہ پچھلے دو ڈائریکٹروں نے ٹورازم محکمہ بلندیوں تک پہنچایا تھا۔ سابقہ ڈائریکٹر محمود شاہ نے ملکی اور غیر ملکی سیاحوں کو وادی کشمیر کی سیاحت پر آنے کیلئے بہت کام کئے تاہم موجودہ انتظامیہ پوری طرح سے ناکام ثابت ہو گئی ہے۔
جے کے این ایس نے اس ضمن میں جب ٹورازم محکمہ کے ایک سینئر آفیسر کے ساتھ رابط قائم کیا تو انہوںنے اس بات کی تصدیق کی کہ بیداری مہم کیلئے مختص چار کروڑ روپیہ لیپس ہو گئے ہیں۔ انہوںنے کہا کہ بدقسمتی سے کہنا پڑرہا ہے کہ رقومات کو خرچ ہی نہیں کیا گیا جس کے نتیجے میں رواں سال وادی کی سیاحت پر کم ہی تعدا دمیں ملکی اور غیر ملکی سیلانی آئے ۔ ادھر ٹورازم سے جڑے افراد نے چا رکروڑ لیپس ہونے پر شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ رواں سال کا سیزن خود محکمہ نے تباہ کیا ہے اور ذمہ داران کو کڑی سے کڑی سزا ملنی چاہئے۔ انہوںنے کہا کہ ملک اور بیرونی ممالک میں بیداری مہم چلانا ٹورازم کیلئے لازمی ہوتا ہے تاہم اس بار محکمہ نے اس کے برعکس کیا نتیجہ یہ نکلا کہ ٹورازم سے جڑے افراد نانہ شبینہ کے محتاج بن گئے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں