5 سی آر پی اہلکار ہلاک، جنگجو بھی جاں بحق، ایس ایچ او ، 3 اہلکار اور خاتون سمیت 5 افراد شدید زخمی، علاقے کو پوری طرح سے سیکورٹی فورسز نے سیل کردیا،  العمر مجاہدین نے حملے کی ذمہ داری قبول کرلی مفرور فدائی کی تلاش بڑے پیمانے پر شروع

کے پی روڑ اننت ناگ کے نزدیک فدائین حملہ

اننت ناگ /نیازحسین / شاہ جنید / یو پی آئی /اے پی آئی /کے پی روڑ اننت ناگ میں وومنز کالج کے نزدیک سی آر پی ایف اور پولیس کی مشترکہ پارٹی پر فدائین حملہ ہوا جس کے نتیجے میں 5 سی آر پی ایف اہلکار موقع پر ہی ہلاک ہوئے جبکہ ایک فدائین بھی مارا گیا ۔ حملے میں ایس ایچ او اننت ناگ ، خاتون سمیت پانچ افراد زخمی ہوئے جنہیں فوری طورپر نزدیکی اسپتال منتقل کیا گیا۔ معلوم ہوا ہے کہ سیکورٹی فورسز نے آس پاس علاقوں کو سیل کرکے فرار ہونے کے سبھی راستوں پر پہرے بٹھا دئے ہیں۔ دفاعی ذرائع کا کہنا ہے کہ علاقے میں ایک اور فدائین چھپا ہوا ہے جسے تلاش/جاری صفحہ نمبر ۱۱پر
 کرنے کیلئے بڑے پیمانے پر کارروائی شروع کی گئی ہے۔ اس بیچ جنوبی کشمیر میں موبائیل انٹرنیٹ خدمات کو منقطع کیا گیا۔ دریں اثنا العمر مجاہدین نے حملے کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے کہاکہ پانچ فوجی اہلکار جنگجوئوں کے حملے میں مارے گئے۔ سہ پہر پانچ بجے کے قریب کے پی روڑ اننت ناگ میں اُس وقت سنسنی اور خوف ودہشت کا ماحول پھیل گیا جب جدید اسلحہ سے لیس فدائین نے سیکورٹی فورسز اور پولیس کی مشترکہ پارٹی پر اندھا دھند فائرنگ کی اور گرنیڈ داغے جس کے نتیجے میں متعدد اہلکار خون میں لت پت ہو کر زمین پر گر پڑے۔ نمائندے کے مطابق عسکریت پسندوں کے ابتدائی حملے میں تین سی آر پی ایف اہلکار موقع پر ہی ہلاک ہوئے جبکہ مزید تین کو نازک حالت میں اسپتال منتقل کیا گیا جہاں پر دو اہلکار زخموں کی تاب نہ لا کر دم توڑ بیٹھے اس طرح سے حملے میں پانچ سی آر پی ایف اہلکار ہلاک ہوئے ۔ مارے گئے سی آر پی ایف اہلکاروں کی شناخت اسسٹنٹ سب انسپکٹر نیرو شرما ، کانسٹیبل ستندر ، کانسٹیبل ایم کے کشوا، اسسٹنٹ سب انسپکٹر رامیش کمار اور کانسٹیبل مہیش کمار کے بطور ہوئی ہے۔ معلوم ہوا ہے کہ جنگجو ئوں نے ایس ایچ او اننت ناگ ارشید خان پر پہلے فائرنگ کی اور بعد میں اُس کے اوپر ایک گرنیڈ بھی داغا جو زور دار دھماکہ کے ساتھ پھٹ گیا جس کے نتیجے میں ایس ایچ او شدید طورپر زخمی ہوا۔ نمائندے نے بتایا کہ ایس ا یچ او کو ضلع اسپتال اننت ناگ منتقل کیا گیا تاہم ڈاکٹروں نے اُس کی حالت نازک قرار دے کر بادامی باغ اسپتال منتقل کیا۔ گرنیڈ حملے میں ایک خاتون صبورہ جان ساکنہ میر دانتر بھی زخمی ہوئی ہے۔ معلوم ہوا ہے کہ فدائین حملے کے دوران عسکریت پسندوں نے جدیدہتھیاروں کا استعمال کیا اور فورسز گاڑی پر کئی گرنیڈ بھی داغے جس کے نتیجے میں سیکورٹی فورسز کے کئی اہلکار مضروب ہوئے۔ ذرائع کے مطابق سیکورٹی فورسز کی جوابی کارروائی میں ایک جنگجو بھی مارا گیا جس کی فوری طورپر شناخت نہیں ہوسکی۔ حملے کی اطلاع ملتے ہی پولیس ، فوج اور سیکورٹی فورسز کے اہلکار جائے موقع پر پہنچے اور آس پاس علاقوں کو محاصرے میں لے کر بڑے پیمانے پر کارروائی شروع کی۔ نمائندے کے مطابق فوج ، پولیس اور پیرا ملٹری فورسز نے کے پی روڑ اننت ناگ اور اُس کے ملحقہ علاقوں کو پوری طرح سے سیل کرکے فرار ہونے کے سبھی راستوں پر پہرے بٹھا دئے۔ دفاعی ذرائع کے مطابق دو فدائین نے سیکورٹی فورسز پر حملہ کیا جن میں سے ایک کو پہلے ہی ہلاک کیا گیا جبکہ دوسرا پاس کی بستی کی طرف فرار ہوا ہے۔ دفاعی ذرائع کے مطابق اس پورے علاقے میں سیکورٹی فورسز کے اہلکاروں کو تعینات کیا گیا ہے جبکہ مفرور جنگجو کو تلاش کرنے کیلئے ڈرون کیمروں سے بھی علاقے کی نگرانی کی جارہی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ حملے میں زخمی ہوئے کئی اہلکاروں کی حالت نازک بنی ہوئی ہے اور اُنہیں بادامی باغ اسپتال منتقل کیا گیا۔ ادھر العمر مجاہدین نے حملے کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے کہاکہ پانچ اہلکار جنگجوئوں کے حملے میں ہلاک ہوئے ہیں۔ ترجمان کے مطابق مستقبل میں بھی اس طرح کے حملوں کا سلسلہ جاری رکھا جائےگا۔ معلوم ہوا ہے کہ کسی بھی ناخوشگوار واقعے کو ٹالنے کیلئے انتظامیہ نے ضلع اننت ناگ میں موبائیل انٹرنیٹ خدمات کو منقطع کیا ہے۔ مقامی ذرائع نے بتایا کہ سیکورٹی فورسز کی جانب سے گھر گھر تلاشی لی جارہی ہے جبکہ مکینوں کے شناختی کارڈ بھی باریک بینی سے چیک کئے جا رہے ہیں۔ پولیس کے ایک آفیسر نے یو پی آئی کو بتایا کہ کے پی روڑ اننت ناگ میں جنگجوئوں نے سیکورٹی فورسز پر حملہ کیا اس سلسلے میں تفصیلات کا انتظار ہے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں