کیرن سیکٹر میں شدید گولہ باری، کنٹرو ل لائن پر 7لاشیں برآمد، بالاکوٹ ، راجوری اور مینڈ ھر پونچھ میں ایل او سی پر جنگ کاساسماں، ریپڈ ایکشن فورس کے دستے جموں پہنچ گئے، جدید ٹینک اور آرٹیلری کنٹرول لائن پر پہنچائی جارہی ہے،فورسز اہلکاروں کی چھٹیاں منسوخ

سرینگر/یو پی آئی /سنیچر کی شام وادی کے کیرن سیکٹر میں بھارت اور پاکستان کی فوج کے درمیان شدید گولہ باری کاتبادلہ ہوا۔اس سلسلے میں این ڈی ٹی وی نے دفاعی ذرایع کے حوالے سے بتایا کہ کیرن سیکٹر میں پاکستان کی بارڈر ایکشن ٹیم نے بھارتی چوکیوں کو نشانہ بنایا اور پے در پے گولہ باری کی جس سے پورا سرحدی علاقہ دہل اٹھا ۔ان ذرایع کے مطابق اس کے بعد ٹیم سے وابستہ ممبران نے سرحد پار کرکے اس جانب پیش قدمی کی لیکن چوکس بھارتی فوج نے جوابی گولہ باری کی اور دراندازی کے مرتکب فوجیوں کو کرارا جواب دیا ۔دفاعی ذرایع کے مطابق جاے واردات پر سات لاشیں پائی گئیں تاہم یہ نہیں بتایا جاسکتا ہے کہ لاشیں جنگجو نوجوانوں کی ہیں یا پاکستان بارڈر ایکشن ٹیم سے وابستہ اہلکاروں کی ہیں ۔ /جاری صفحہ نمبر ۱۱پر
آخری اطلاعات ملنے تک فریقین کے درمیان گولہ باری کا تبادلہ جاری تھا جس کی بنا پر لاشیں اٹھانے کے کام میں دشواریاں پیش آرہی تھیں ۔اس سلسلے میں مزید تفصیلات کا انتظار ہے ادھر پاکستان نے اس بارے میں کچھ بتانے سے انکار کردیا البتہ اتناضرور کہا کہ بھارتی فوج نے پاکستانی پوزیشنوں پر کلسٹر بموں سے حملے کئے لیکن دفاعی ترجمان نے اس کی تردید کی،نئی دہلی سے ’’رپڈ ایکشن فورس ‘‘کی کمپنیاں جموں وار دہوئی ہیں جبکہ سی آر پی ایف نے تمام اہلکاروں کی چھٹیاں منسوخ کرکے فوری طورپر ڈیوٹیوں پر حاضرہونے کے احکامات صادر کئے ۔ ذرائع نے بتایا کہ جدید ٹینکوں اور آرٹیلری کو لائن آف کنٹرول پر پہنچانے کا سلسلہ بھی شروع کیا گیا ہے۔ ادھر جدید ائر فورس جہاز سے اضافی اہلکاروں کو وادی لانے کا سلسلہ جاری ہے۔  رپڈ ایکشن فورس یعنی ’’آر اے ایف ‘‘ کی درجنوں کمپنیاں خصوصی گاڑیوں کے ذریعے جموں پہنچائی گئی ہے۔ نمائندے نے بتایا کہ رپڈ ایکشن فورس کو کئی علاقوں میں تعینات کیا گیا ہے جبکہ وادی میں بھی رپڈ ایکشن فورس کی تعیناتی کے حوالے سے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں۔ ادھر سی آر پی ایف نے تمام اہلکاروں کی چھٹیاں منسوخ کرکے اُنہیں فوری طورپر ڈیوٹیوں پر حاضر ہونے کے احکامات صادر کئے ہیں۔ ذرائع نے بتایا کہ ریاست میں تعینات پیرا ملٹری اہلکاروں کو بتایا گیا ہے کہ اُنہیں فی الحال رخصت پر جانے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ وادی کشمیر میں کے چپے چپے پر سیکورٹی فورسز کی اضافی نفری کو تعینات کیا گیا ہے جبکہ جنوبی کشمیر کے ترال علاقے میں تیس گاڑیوں میں بھر کر پیرا ملٹری فورسز کو پہنچا دیا گیا ہے۔ دھر جموں کے کئی علاقوں میں اُس وقت سنسنی کا ماحول پھیل گیا جب جدید ٹینکوںاور آرٹیلری کو لائن آف کنٹرول پہنچا دیا گیا۔ سوشل میڈیا پر وائرل ویڈیو میں صاف طورپر دیکھا جاسکتا ہے کہ جنگجوں کے دوران استعمال ہونے والے سامان کو لائن آف کنٹرول پہنچایا جارہا ہے۔ دریں اثنا نئی دہلی اور مختلف ریاستوں میں زیر تعینات پیرا ملٹری فورسز کے اضافی دستوں کو ائر فورس کے خصوصی ظیارے کے ذریعے سرینگر پہنچانے کا سلسلہ دوسرے روز بھی جاری رہا۔ ذرائع نے بتایا کہ خصوصی ائر فورس طیارے کے ذریعے پیرا ملٹری فورسز اہلکاروں کو سرینگر ائر پورٹ پر پہنچانے کا سلسلہ جاری رہنے کے نتیجے میں لوگ خوف ودہشت کا شکار ہو گئے ہیں۔ بالاکورٹ راجوری اور مینڈھر پونچھ سیکٹروں میں ہند و پاک افواج کے درمیان شام دیر گئے شدید گولہ باری کا سلسلہ شروع ہوا جس کے نتیجے میں لوگ گھروں میں سہم کررہ گئے۔ معلوم ہوا ہے کہ دونوں اطراف سے آرٹیلری کا استعمال کیا جارہا ہے۔ دفاعی ذرائع کے مطابق پاکستانی رینجرس نے ایک دفعہ پھر ناجنگ معاہدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے بی ایس ایف چوکیوں کو بھاری ہتھیاروں سے نشانہ بنایا ۔ سنیچر شام دیر گئے راجوری کے بالا کوٹ سیکٹر اور مینڈھر پونچھ میں پاک بھارت افواج کے درمیان شدید گولہ باری کا سلسلہ شروع ہوا ۔ نمائندے کے مطابق دونوں اطراف سے شدید شلنگ کے باعث آس پاس رہائش پذیر لوگ محفوظ مقامات کی اور منتقل ہونے پر مجبور ہو گئے۔ ذرائع نے بتایا کہ کئی موٹار شیل رہائشی مکانات کے نزدیک زور دار دھماکوں کے ساتھ پھٹ گئے جس کی وجہ سے لوگوں نے زیر زمین بینکروں میں پناہ حاصل کی۔ دفاعی ذرائع نے اس بات کی تصدیق کی کہ بالا کوٹ اور مینڈھر پونچھ میں پاکستانی رینجرس کی جانب سے سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی کی گئی جس کے نتیجے میں لوگوں میں تشویش کی لہر دوڑ گئی ہے۔ دفاعی ذرائع کے مطابق پاکستانی رینجرس کی جانب سے موٹار شیلوں کا استعمال کیا جارہا ہے۔ آخری اطلاعات موصول ہونے تک ہندو پاک افواج کے درمیان بالا کوٹ اور مینڈھر پونچھ سیکٹروں میں شدید گولہ باری کا سلسلہ جاری تھا۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں