کشمیر میں حالات اب بالکل ٹھیک ہیں دفعہ 370کی منسوخی کے بعد تشددکے واقعات میں کمی:امت شاہ،  کہادہلی فسادات بھڑکانے والوں کے خلاف سخت کارروائی کی جائےگی

جے کے این ایس مانیٹرنگ : نئی دہلی/ مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ نے کہا کہ کشمیر کی صورتحال بالکل ٹھیک ہے۔انہوں نے کہاکہ آرٹیکل370 ختم کرنے کے بعد بھی ملی ٹنسی اورتشددکے واقعات کافی کم ہوئے ہیں ۔امت شاہ کاکہناتھاکہ اگرہم سال2014سے2020تک کاموازنہ کریں تودیکھتے ہیں کہ دفعہ 370کی منسوخی کے بعدکشمیر میں تشددکے اعدادوشمار بے حد کم ہیں۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ کشمیری بھی یہ سمجھ چکے ہیں کہ ان کے بچوں کو تشددورخون خرابے سے آزادی دلانے کا کام مودی حکومت ہی کرسکتی ہے۔ایک نجی نیوزچینل کودئیے انٹرویو میں مرکزی وزیرداخلہ امت شاہ نے ملک بھر میں شہریت ترمیمی قانون کو لے کر ہوئے احتجاج کے بارے میں کہا کہ میں نےCAAکے وقت کی گئی اپنی پریس کانفرنس میں کہا تھا کہ ابھی سی اے اے لے کر آئے ہیں، این آر سی جب لائیں گے، تب اس پر بحث کریں گے۔ وزیر داخلہ امت شاہ نے کہا کہ میں ملک بھر کے مسلم بھائی بہنوں سے کہنا چاہتا ہوں کہ سی اے اے کے اندر ایک بھی ایسا بندوبست نہیں ہے، جو کسی کی شہریت لے لے۔وزیر داخلہ نے کہا کہ جب میں نے راجیہ سبھا میں تقریر کی تو کپل سبل، آنند شرما اور غلام نبی آزاد نے بھی اس بات کا اعتراف کیا کہ ہم نہیں کہتے کہ اس سے شہریت جائے گی، لیکن پھر بھی ان کی پارٹی کی سربراہ رام لیلا میدان میں کیوں ایسا بولے کہ یہ لوگوں کے وجود کی لڑائی ہے، سڑکوں پر آجائیے، کیوں لوگوں کو اکسایا گیا؟ وزیر داخلہ نے مزید کہا کہ مگر یہ سب لمبا نہیں چلتا ہے، ہم نے بھی اپنی باتوں کو رکھا، پارلیمنٹ میں بھی اس پر کئی مرتبہ بحث ہوئی اور دھیرے دھیرے یہ بات نیچے تک پہنچی کہ سی اے اے سے کسی کی بھی شہریت نہیں جانے والی ہے اور اس کو غلط طریقہ سے لوگوں کے سامنے رکھا گیا ہے۔مرکزی کی نریندر مودی حکومت کی دوسری مدت کار کا پہلا سال پورا ہونے کے بعدہوئے انٹرویو میں وزیر داخلہ امت شاہ نے دہلی فسادات کے سوال پر کہا کہ دہلی فسادات کو بھڑکانے والوں اور اس کی سازش کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔ انہوں نے کہاکہ بھلے ہی کوئی بڑا آدمی فسادات کیلئے ذمہ دار ہو ، اس کے خلاف قدم اٹھائیں گے۔ امت شاہ نے کہا کہ گزشتہ کسی بھی فسادات کے مقابلہ میں ان فسادات میں سب سے سخت قدم اٹھائے جائیں گے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں