جنگجو مخالف آپریشن ،سال رواں کے 9ماہ 168عسکریت پسند مختلف معرکہ آرائیوں میں جاںبحق 130نوجوان جنگجوؤں کی صف میں شامل،29گرفتار:سیکورٹی ایجنسیز

یو پی آئی �کے این ایس : سرینگر/سیکورٹی ایجنسیوں کا کہنا ہے کہ رواں سال مقامی جنگجوؤں کی ملی ٹینٹ صفوں میں شمولیت کے رجحان میں غیر معمولی کمی واقع ہوئی ہے۔ سیکورٹی ذرائع کے مطابق رواں برس کے دوران 130مقامی نوجوانوں نے بندوق کو گلے لگایا جن میں سے 84کو جھڑپوں کے دوران مار گرایا گیا اور متعدد کو گرفتار بھی کیا گیا ہے۔ جموںوکشمیر میں رواں برس کے نو ماہ کے دوران مقامی نوجوانوں کی ملی ٹینٹ صفوں میں شمولیت کے رجحان میں کمی واقع ہوئی ہے۔ سیکورٹی ایجنسیوں کے مطابق سال 2019میں 140مقامی نوجوانوں نے ملی ٹینٹ صفوں میں شمولیت اختیار کی ، سال 2018میں 201مقامی نوجوانوں نے بندوق کو گلے لگایا تاہم رواں سال کے 9ماہ کے دوران 130مقامی نوجوانوں نے جنگجو تنظیم میں شمویلت اختیار کی جن میں سے 84کو تصادم آرائیوں کے دوران مار گرایا گیا اور کئی ایک کو زندہ گرفتار بھی کیا گیا ہے۔ اعدادوشمار کے مطابق رواں سال کے دوران 168عسکریت پسند / جاری صفحہ نمبر ۱۱پر
جھڑپوں کے دوران جاں بحق ہوئے اور گزشتہ سال 152ملی ٹینٹ تصادم ارائیوں کے دوران مارے گئے جبکہ سال 2018میں 246ملی ٹینٹ ہلاک ہوئے۔ دفاعی ذرائع نے بتایا کہ مقامی نوجوانوں کی جنگجو تنظیموں میں شمولیت اگر چہ تشویشناک امر ہے تاہم سیکورٹی ایجنسیاں مقامی نوجوانوں کو راہ راست پر لانے کیلئے اقدامات اُٹھا رہی ہیں۔ اعداد وشمار ظاہر کرتے ہوئے دفاعی ذرائع نے بتایا کہ رواں برس 130مقامی نوجوان ملی ٹینٹ بنے جن میں سے 55ابھی تک جھڑپوں کے دوران جاں بحق ہوئے جبکہ 29کو گرفتار بھی کیا گیا ہے۔ انہوںنے کہاکہ 130میں سے اب صرف 46ہی زندہ بچے ہیں ۔ دفاعی ذرائع نے بتایا کہ پاکستان کی خفیہ ایجنسیز وادی کشمیر کے مقامی نوجوانوں کو تشدد کیلئے اُکسا رہی ہیں جس وجہ سے وہ پھر بندوق کو گلے لگا رہے ہیں۔ مذکورہ آفیسر کا کہنا تھا کہ وادی کشمیر میں سرگرم عسکریت پسندوں کے خلاف بڑے پیمانے پر آپریشن جاری ہے جس کے ثمر آور نتائج برآمد ہور ہے ہیں۔ انہوںنے کہاکہ پاکستان کی خفیہ ایجنسیوں کو ہر صورت میں ناکام بنایا جائے گا جبکہ مقامی نوجوانوں کو مین اسٹریم کی طرف راغب کرانے کی خاطر کوششیں جاری ہیں۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں