سانبہ سیکٹر میں ہندوپاک افواج کے درمیان گولہ باری کا تبادلہ - راجپور اور گگوال علاقوں میں خوف ودہشت کی لہر

یو این آئی
     جموں/ سانبہ میں بین الاقوامی سرحد پر ہفتے کو ہندوستان اور پاکستان کی فوج کے درمیان گولہ باری کا تبادلہ ہوا تاہم کسی بھی جانب کسی نقصان کی کوئی اطلاع نہیں ہے۔سرکاری ذرائع نے بتایا کہ ضلع سانبہ کے راجپور اور گگوال دیہات کے علاقوں میں بین الاقوامی سرحد پر ہفتے کو اس وقت پاکستانی فوج نے بلا کسی اشتعال کے گولہ باری کی جب وہاں بی ایس ایف اہلکار کسی تعمیری کام کے ساتھ مصروف تھے۔انہوں نے کہا کہ وہاں موجود بی ایس ایف اہلکاروں نے حملے کا بھر پور جواب دیا۔ذرائع نے بتایا کہ پاکستان کی طرف سے اس گولہ باری سے راجپور اور گگوال علاقوں میں خوف ودہشت کی لہر پھیل گئی ہے اور لوگ گھروں سے باہر آنے سے کترا رہے ہیں۔بتادیں کہ دونوں ممالک کے درمیان سال ۳۰۰۲ میں جنگ بندی معاہدہ طے پانے اور گذشتہ قریب ایک سال سے جاری کورونا وبا کے باوجود بھی جموں وکشمیر کے سرحدوں پر گولہ باری کے تبادلے کا سلسلہ تواتر کے ساتھ جاری ہے۔جموں و کشمیر کی سرحدوں پر طرفین کے درمیان گذشتہ تین برسوں کے دوران زائد از ساڑھے آٹھ ہزار بار جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی ہوئی ہے۔
وزارت امور داخلہ نے جموں کے ایک کارکن کی طرف سے دائر ایک آر ٹی آئی کے جواب میں انکشاف کیا ہے کہ یکم جنوری ۸۱ئ سے سال رواں کے ماہ جولائی تک جموں و کشمیر میں سرحدوں پر پاکستان نے 8 ہزار 5 سو 71 بار جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کی ہے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں