100دن میں ہر سکول اور آنگن واڑی مرکز کو پینے کا پانی فراہم ہوگا

وزیر اعظم کے ویژن کو پورا کرنے کیلئے جل شکتی وزارت نے جموں وکشمیر میں ’جل جیون‘ مشن کے نفاذ کی پیشرفت کا جائزہ لیا

    سرینگر/پی آئی بی/ بچے ہر ملک کا مستقبل ہوتے ہیں اور پینے کا صاف پانی اور صفائی ستھرائی ، اْن کے فروغ اور جامع ترقی کے لئے ضروری ہے۔ جل شکتی کی وزارت نے 2 اکتوبر ، 2020 ئ کو وزیر اعظم جناب نریندر مودی کے ویڑن اور اْن کی ہدایت کے تحت پورے ملک کے اسکولوں اور آنگن واڑی مرکزوں میں پینے کے صاف پانی کی سپلائی کو یقینی بنانے کی خاطر 100 دن کی مہم کا آغاز کیا ہے ۔ مرکز کے زیر انتظام علاقہ جموں و کشمیر ان تمام اداروں میں مہم کی مدت کے اندر پینے کا صاف پانی فراہم کرکے وزیر اعظم کے ویڑن کو پورا کرنے کا منصوبہ رکھتا ہے تاکہ اسکول دوبارہ کھلنے پر بچوں کو پینے ، ہاتھ دھونے اور بیت الخلائ میں استعمال کے لئے پائپ کے ذریعے صاف پانی حاصل ہو سکے ۔ ریاستوں / مرکز کے زیر انتظام علاقوں میں جل جیون مشن â جے جے ایم á کے نفاذ کی پیش رفت کا جائزہ لینے کے لئے تمام ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کا سال کے بیچ میں جل شکتی کی وزارت کی قومی جل جیون مشن ٹیم نے ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے جائزہ لیا ، جس میں ریاستیں / مرکز کے زیر انتظام علاقے دیہی گھروں میں نل کے پانی کے کنکشن اور ادارہ جاتی نظام قائم کرنے اور سبھی کا احاطہ کرنے کے بارے میں موجودہ صورت حال کو پیش کیا۔ جموں و کشمیر نے مرکز کے زیر انتظام علاقے میں جے جے ایم کے نفاذ میں پیش رفت کے بارے میں آج اپنی رپورٹ پیش کی۔ مرکز کے زیر انتظام علاقہ جموں و کشمیر میں 18.17 لاکھ مکان ہیں ، جن میں 8.38 لاکھ â 46 فی صد á میں پہلے ہی نل کے پانی کا کنکشن فراہم کیا جا چکا ہے۔ مرکز کے زیر انتظام علاقہ کو ، اِس مالی سال کے لئے جے ایم ایم کے تحت مرکز کے حصے کے طور پر 681.77 کروڑ روپئے مختص کئے گئے ہیں۔ مرکز کے زیر انتظام علاقہ مالی اور کام کی بنیاد پر مزید رقم مختص کئے جانے کا اہل ہے۔ مرکز کے زیر انتظام علاقہ24-2023 ئ کے قومی ہدف سے کافی پہلے دسمبر، 2022 ئ تک صد فی صد گھروں کا احاطہ کرنے کا منصوبہ رکھتا ہے ۔ ایسا کرکے جموں و کشمیر تمام دیہی گھروں میں نل کے ذریعے پانی کا کنکشن فراہم کرنے کا ہدف پورا کرنے کی ایک مثال قائم کرے گا۔ جموں و کشمیر نے 4038 گائووں کے لئے ولیج ایکشن پلان â وی اے پی á کو قطعی شکل دے دی ہے۔ وی اے پی میں استحکام کی سورس ، پانی کی سپلائی ، گندے پانی کا بندوبست ، اسے چلانے اور دیکھ ریکھ جیسی چیزیں شامل ہیں۔ یہ منصوبہ بندی سب سے نچلی سطح تک یعنی گائوں / گرام پنچایت تک کی گئی ہے تاکہ سورس کے استحکام واٹر ہارویسٹنگ ، پانی کا ری چارج ، گندے پانی کی صفائی اور گندے پانی کا بندوبست وغیرہ کو مستحکم طریقے سے انجام دیا جا سکے۔ اس کام کو ایم جی نریگا ، 15 ویں مالی کمیشن کی گرانٹ برائے پی آر آئی ، ایس بی ایم â جی á ، سی ایس آر فنڈ ، لوکل ایریا ڈیولپمنٹ فنڈ وغیرہ کو منصفانہ طور پر استعمال کیا جا سکے گا۔
 گائوں کی سطح پر پانی اور صفائی ستھرائی کی کمیٹی کی تشکیل پر زور دیا گیا ہے تاکہ مقامی گائوں کی برادری / گرام پنچایت یا اس کی ذیلی کمیٹی کو گائووں میں پانی کی سپلائی کے بندوبست اور دیکھ بھال کے نفاذ اور منصوبہ بندی میں شامل کیا جا سکے تاکہ پانی کی سپلائی کے نظام کو طویل مدت تک برقرار رکھا جا سکے اور دیہی علاقوں میں پینے کے پانی کی کفالت کی جا سکے۔ مرکز کے زیر انتظام علاقے سے گرام پنچایت کے کارکنوں کو تربیت دے کر، اْن کی صلاحیت سازی کے لئے کہا گیا ہے اور ان کے ساتھ دیگر فریقوں کی صلاحیت سازی اور تربیت پر توجہ مرکوز کی جائے گی تاکہ گائوں کی سطح پر تربیت یافتہ انسانی وسائل حاصل ہو سکے ، جو پانی کی سپلائی کے نظام میں ٹوٹ پھوٹ کی دیکھ بھال کرنے اور اس نظام کو نافذ کرنے میں بہت مدد گار ہوں گے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں