جموںوکشمیر میں رشوت ستانی و بدعنوانی کے خلاف مہم شروع - 35 سرکاری افسروں اور ملازمین کی معطلی - انسداد و رشوت ستانی اداروں کو زیادہ اختیارات دینے کا حکم جاری

جے کے این ایس : سرینگر؍جموں وکشمیر میں انسداد کورپشن ورشوت ستانی مہم شروع کرتے ہوئے حکومت نے 35سرکاری افسروں اورملازمین کوبدعنوانی کی پاداش میں معطل کردیاہے ،جن میں محکمہ خوراک،سیول سپلائز وعوامی تقسیم کاری،محکمہ ٹرانسپورٹ ،محکمہ مال ،محکمہ جنگلات وماحولیات کے ایسے ملازمین وافسربھی شامل ہیں ،جن کیخلاف ویجی لنس اوردیگر اداروں میں رشوت ستانی ،مالی خرد برد یاکورپشن سے متعلق کیس درج اورزیرسماعت تھے ۔جے کے این ایس کومعلوم ہواکہ جموں وکشمیر  ( جاری صفحہ نمبر ۱۱پر)
 کے لیفٹنٹ گورنر نے مختلف تحقیقاتی اداروں بشمول انسدادکورپشن بیورؤ،ریاستی ویجی لنس آرگنائزیشن اورکرائم برانچ کے حکام کویہ ہدایت دی تھی کہ وہ ایسے افسروں اورملازمین کیخلاف درج کیسوں کاجائزہ لیکر اُن کی لست فراہم کریں ،جن پرکورپشن،بدعنوانی ،رشوت ستانی اوراپنے اختیارات کاغلط استعمال کئے جانے سے متعلق کیس درج اورزیرسماعت ہیں ۔مختلف تحقیقاتی اداروں کی جانب سے فراہم کردہ فہرست کی بنیاد پرمختلف سرکاری محکموں سے وابستہ35افسروں اورملازمین کی بدعنوانی کی پاداش میں معطلی عمل میں لائی گئی ہے ،جن میں محکمہ خوراک،سیول سپلائز وعوامی تقسیم کاری کے5 اہلکار ، محکمہ ٹرانسپورٹ کے2، محکمہ مال اور محکمہ دیہی ترقی سے ایک ایک ، محکمہ جنگلات اور ماحولیات محکمہ سے 24 اور پبلک ورکس ڈیپارٹمنٹ سے2ملازمین وابستہ تھے ۔معلوم ہواکہ ان تمام 35سرکاری افسروں اورملازمین کوتاحکم ثانی معطل کردیاگیا ہے اوراُن کیخلاف درج کیسوں کی تحقیقات میں تیزی لائی گئی ہے۔

 ،اوراس سلسلے میں لیفٹنٹ گورنر نے ریاستی ویجی لنس تنظیم کوضلعی سطح پربھی اپنی تحقیقات میں سرعت لانے کی ہدایت دی ہے ۔
بتایاجاتاہے کہ کورپشن ،رشوت ستانی اوربدعنوانی کے کیسوں کاسامنا کررہے افسروں اورملازمین کی معطلی کافیصلہ جموں وکشمیر کی انتظامیہ نے حال ہی میں ایک میٹنگ کے دوران لیا۔
جسکے بعداس سلسلے میں احکامات جاری کئے گئے ۔یہ بھی معلوم ہواکہ جموں وکشمیر کی انتظامیہ اورسرکاری محکموں کوکورپشن ،رشوت ستانی اوردیگرایسے امراض سے صاف وپاک کرنے کیلئے جموں و کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا نے سخت احکامات جاری کرتے ہوئے انسدادکورپشن اداروں کو زیادہ اختیارات دینے کاحکم بھی دیاہے ۔ذرائع نے بتایا کہ یہ ہدایات گزشتہ دنوں سیول سکریٹریٹ سری نگرمیں لیفٹیننٹ گورنر کی زیر صدارت انتظامی سیکرٹریوں کے ایک اعلی سطحی اجلاس کے بعد جاری کی گئیں۔معلوم ہواکہ رواں سال اکتوبر تک ،انسداد کورپشن بیورؤنے بدعنوانی کے61 مقدمات درج کئے تھے۔مذکورہ بیورو کی جموں یونٹ میں بدعنوانی کے 29 مقدمات درج تھے اور کشمیر یونٹ پر 32 مقدمات درج تھے۔ جبکہ 2019 میں ، مختلف سرکاری عہدیداروں کے خلاف کل73 ایف آئی آر درج کی گئیں۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں