انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ کی طرف سے سرینگر اور جنوبی کشمیر میں سات مقامات پر چھاپے
بینکوں میں جمع شدہ رقومات کی تفصیلات حاصل کی گئیں، اہم دستاویزات ضبط 

یو پی آئی - سرینگر؍انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ (ای ڈی )نے ”منی لانڈرنگ ایکٹ “کے تحت درج کیس کے سلسلے میں سرینگر اور جنوبی کشمیر میں سات مقامات پر چھاپہ ماری کی جس دوران کاغذات کو ضبط کرنے کا دعویٰ کیا گیا ہے۔ای ڈی کے مطابق مشتبہ بینک کھاتوں میں بڑی مقدار میں رقم جمع اور نکالی گئی ہے اور اس سلسلے میں بینک سے سٹیٹمنٹ بھی حاصل کی جارہی ہیں۔ خبر رساں ایجنسی یو پی آئی کے مطابق انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ (ای ڈی )نے سنیچر کے روز سرینگر اور اننت ناگ میں چھاپے ڈالے۔ معلوم ہوا ہے کہ کاونٹر انٹیلی جنس ونگ اور سی آئی کے سرینگر کی جانب سے ”منی لانڈرنگ ایکٹ “کے تحت کیس درج کرنے کے بعد ای ڈی نے چھاپہ ماری کی۔ ذرائع نے بتایا کہ جموںوکشمیر سے تعلق رکھنے والے کئی افرادجن میں خاص طور پر بڑی کنسٹریکشن اور دیگر کمپنیاں شامل ہیں نے جموںوکشمیر بینک اکاونٹس میں مشتبہ لین دین کیا ہے یعنی بڑی مقدار میں رقم جمع کی اور اُس رقم کر پھر بینک سے نکالا بھی ۔ ذرائع نے بتایا کہ مذکورہ افراد نے یہ رقم کہاں سے لائی ہے اس کی تحقیقات شروع کی گئی ہے۔ انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ ذرائع نے بتایا کہ مختلف بینک کھاتہ داروں کے خلاف ایف آئی آر درج کیا گیا ہے ۔ ای ڈی ذرائع کے مطابق جموںوکشمیر بینک کے ذریعے جو ٹرانزکشن کی گئی ہے وہ قانونی طورپر جائز نہیں ہے اور ایسا لگ رہا ہے کہ یہ بینک اکاونٹ منی لانڈرنگ کیلئے استعمال کئے جارہے ہیں۔ ای ڈی ذرائع کے مطابق مصدقہ اطلاع موصول ہونے کے بعد انفورسمنٹ ڈائر  ( جاری صفحہ نمبر ۱۱پر)
یکٹوریٹ کے سینئر آفیسران نے سرینگر کے چھ اور جنوبی کشمیر میں ایک جگہ پر چھاپہ مارا۔ ای ڈی ذرائع کے مطا بق چھاپہ ماری کے دوران ہمیں اس بات کے ٹھوس ثبوت ملے ہیں کہ ا ن اکاونٹوں کے ذریعے مشکوک لین دین کیا گیا ہے ۔ای ڈی ذرائع کا مزید کہنا تھا کہ مشتبہ بینک کھاتوں کے بارے میں بینک انتظامیہ سے بھی رابط قائم کیا گیا ہے اور سٹیٹمنٹ بھی حاصل کی جارہی ہیں۔ ای ڈی ذرائع کے مطابق ان مشتبہ بینک اکاونٹوں سے بھاری مقدار میں رقومات جمع اور نکالی گئی ہیں۔ ای ڈی ذرائع کے مطابق چھاپہ ماری کے دوران قابلِ اعتراض مواداور اہم کاغذات برآمد کرکے ضبط کئے گئے ہیں اوراس کی اب باریک بینی سے تحقیقات شروع کی گئی ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ بینک کھاتوں پر باریک بینی سے نظر گزر رکھ رہی ہیں اور ملک سے باہر جتنی بھی ٹرانزکشن ہو رہی ہیں اس پر گہری نگاہ رکھی جارہی ہے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں