رواں برس ماہ جنوری سے نومبر کے پہلے ہفتے تک 191جنگجو جاں بحق ہوئے

گزشتہ ایک دہائی میں 2020میں ملٹنسی ریکروٹمنٹ کی دوسری بڑی لہر دیکھی گئی: رپورٹ

سرینگر؍سال 2020 میں گزشتہ ایک دہائی میںدوسرا سال ایسا دیکھنے کو ملا جس میں سب سے زیادہ جنگجوؤں کی بھرتی ہوئی ہے جبکہ اس برس اب تک 191جنگجو مختلف معرکہ آرائیوں میں مارے گئے جن میں 20غیر ملکی جنگجو بھی شامل ہے ۔ تفصیلات کے مطابق رواں برس گزشتہ ایک دہائی میں دوسرا ایسا سال دیکھنے کو ملا جس میں سب سے زیادہ جنگجوؤں کی بھرتی دیکھنے کو ملی ہے ۔ رواں برس ماہ جنوری سے ماہ نومبر کے پہلے ہفتے تک جموں کشمیر میں 191جنگجو مارے گئے  ( جاری صفحہ نمبر ۱۱پر)
جن میں 20غیر ملکی جنگجو بھی شامل ہےں ۔ میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ اس عرصے میں 145نوجوانوں نے عسکری صفوں میں شمولیت اختیار کی جوکہ گزشتہ ایک دہائی میں دوسرا برس ہے جس میں سب سے زیادہ نوجوانوںنے جنگجوتنظیموں میں شمولیت کی جبکہ اس برس سب سے زیادہ عسکریت پسند مارے گئے ۔ سال 2018میں 107تصادم آرائیوں میں 245جنگجو مارے گئے اس برس 210نوجوانوں نے مختلف جنگجو تنظیموں میں شمولیت اختیار کی تھی۔
 رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ رواں برس 2020میں 5سے آٹھ نوجوان لاپتہ ہے جن کے بارے میں بتایا جاتا ہے کہ انہوںنے بھی ممکنہ طور پر عسکری صفوں میں شمولیت اختیار کی ہے ۔ جبکہ اس عرصے میں 50سے زیادہ نوجوانوں کو گرفتار کرلیا گیا ہے اور متعدد جنگجوؤں نے پولیس اور فوج کے سامنے ہتھیار ڈالے ۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ خطہ چناب اور خطہ پیر پنچال میں بھی عسکریت میں اضافہ دیکھنے کو ملا جہاں پر 2019میں 157جنگجو79فوجی تصادم آرائیوں میں مارے گئے اور 127نوجوانوں کو جنگجوتنظیموں میں شمولیت سے روکا گیا ۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں