انتظامیہ جمہوری اصولوں کے برعکس کام کر رہی ہے: فاروق عبداللہ

ڈاکٹر فاروق کا خط الیکشن کمشنر کے نام، انتخابی امیدواروں کےلئے سکیورٹی طلب - کہا ہمارے امیدواروں کو چنائو مہم شروع کرنے کی اجازت نہیں دی جا رہی ہے

یو پی آئی ؍کے این ایس : سرینگر؍ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے الیکشن کمشنر کو خط روانہ کیا ہے جس میں الزام لگایا گیا کہ عوامی اتحاد برائے گپکار اعلامیہ کے اُمیدواروں کو چناو مہم شروع کرنے کی اجازت نہیں دی جارہی ہیں۔ اپنے خط میں فاروق نے لکھاکہ کسی بھی حکومت کو یہ حق حاصل نہیں کہ وہ جمہوری اداروں کی ان بنیادوں کو تبدیل کرے جن کی پرورش ہزاروں سیاسی کارکنان کی قربانیوں کا نتیجہ ہے۔ خبر رساں ایجنسی یو پی آئی کے مطابق ہفتہ کے روز پیپلز الائنس کے چیرمین فاروق عبدا ﷲنے الیکشن کمشنر ”کے کے شرما “کو ایک خط روانہ کیا جس میں الزام لگایا کہ عوامی اتحاد برائے گپکار سے وابستہ ڈی ڈی سی اُمیدواروں کو الیکشن مہم شروع کرنے کی اجازت  نہیں د ی جارہی ہیں۔ پیپلز الائنس کے مطابق ہمارے اُمید واروں کو سیکورٹی  کے نام پر ہوٹلوں میں مقید رکھا گیا ہے اور اُنہیں اپنے اپنے علاقوں میں چناو مہم شروع کرنے کی اجازت نہیں دی جارہی ہیں۔ انہوں نے کہاکہ الیکشن کا مطلب گھر گھر جا کر لوگوں کو اُمیدواروں کے حق میں ووٹ ڈالنے کے ضمن میں مہم شروع کرنی ہوتی  ( جاری صفحہ نمبر ۱۱پر)
ہے تاہم جموںوکشمیر میں بھاجپا کو کھلی چھوٹ دی گئی ہے تاہم پیپلز الائنس کے اُمیدواروں نے ایک بھی ریلی نہیں کی ہے۔اپنے خط میں فاروق نے لکھاکہ کسی بھی حکومت کو یہ حق حاصل نہیں کہ وہ جمہوری اداروں کی ان بنیادوں کو تبدیل کرے جن کی پرورش ہزاروں سیاسی کارکنان کی قربانیوں کا نتیجہ ہے۔انہوں نے کہا کہ یہاں الیکشن لڑنے والے امیدواروں کیلئے سیکورٹی کا مسئلہ کوئی نیا نہیں ہے بلکہ وادی کے اندر خاص کر تین دہائیوں سے بہت ہی دردناک واقعات پیش آتے رہے ہیں۔انہوں نے لکھا”وادی میں جمہوریت کا سفر خون سے لبریزہے،اس میں ہزاروں سیاسی کارکنان کا لہو شامل ہے جنہوں نے جمہوریت کیلئے اپنی جانیں دیں“۔انہوں نے مزید لکھا کہ سیکورٹی کو بہانہ بناکر جمہوری اصولوں کو تبدیل کرنا ان قربانیوں کی توہین کے مترادف ہے۔ انہوںنے کہاکہ انتظامیہ کہہ رہی ہے کہ چناو کے پیش نظر اُمیدواروں کو سیکورٹی فراہم کی گئی ہے جو سرا سر بے بنیاد ہے کیونکہ جموںوکشمیر میں نامساعد حالات کوئی نئی بات نہیں ۔ فاروق عبدا ﷲنے خط میں مزید لکھا کہ ماضی میں بھی حالت اس سے بدتر ہے تاہم چناو شروع ہوتے ہی سب پارٹیوں کو ریلیاں منعقد کرنے کی اجازت دی جارہی تھی تاہم اس وقت جو کچھ بھی ہو رہا ہے وہ جمہوری اصولوں کے منافی ہے۔ انہوںنے کہاکہ پچھلے تین دہائیوں سے جموںوکشمیر میں حالت ناموافق ہیں اس کا ہرگز یہ مطلب نہیں کہ پیپلز الائنس کے اُمیدواروں کو سرکار کوٹھیوں میں بند رکھا جائے۔ پیپلز الائنس نے الزام لگایا کہ انتظامیہ جمہوری اصولوں کوپاؤں تلے روند ھ رہی ہیں۔ فاروق عبدا ﷲنے خط میں مزید لکھا کہ جموںوکشمیر میں جمہوریت کے جڑوں کو مضبوط کرنے کی خاطر ہزاروں سیاسی کارکنوں نے جانوں کی قربانیاں دی ہیں ۔ انہوںنے کہاکہ کسی بھی حکومت کو یہ حق نہیں بنتا کہ وہ جمہوری اصولوں کے منافی کام کرے اور اُمیدواروں کوچناو تیاریاں کرنے کی اجازت نہ دے۔ انہوںنے کہاکہ پیپلز الائنس کے اُمیدواروں کو سیکورٹی بھی فراہم نہیں کی گئی بلکہ بھاجپا کے اُمیدواروں کو بھر پور سیکورٹی فراہم کی گئی ہیں۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں