وہ وقت دور نہیں جب مرکزی حکومت ہاتھ جوڑ کردفعہ 370کو دوبارہ بحال کرئے گی

بھاجپا کی غلط پالیسیوں کے نتیجے میں جموںوکشمیر کی بڑی سیاسی پارٹیاں ایک ہی پلیٹ فارم پر جمع ہوئیں - جب بھی جموںوکشمیر کو اپنا جھنڈا دیا جاتاہے تب ترنگے کو ساتھ لے کر دونوں جھنڈے لہراؤں گی /محبوبہ مفتی کا انٹرویو

یو پی آئی : سرینگر؍پی ڈی پی صدر نے انتظامیہ پر الزام عائد کیا ہے کہ ڈی ڈی سی انتخابات میں حصہ لینے والے پیپلز الائنس کے اُمیدواروں کو چناو مہم شروع کرنے کی اجازت نہیں دی جارہی جبکہ بھاجپا کے اُمیدوار کھلے عام لوگوں سے مل رہے ہیں۔ انہوں کہاکہ یہ بھاجپا ہی ہے جس کی غلط پالیسوں کے نتیجے میں جموںوکشمیر کی بڑی سیاسی پارٹیاں ایک ہی پلیٹ فارم پر آئی ہیں۔ پی ڈی پی صدر نے واضح کیا کہ جب مرکز ہمیں اپنا جھنڈے واپس کرئے تو میں بڑے فخر کے ساتھ ترنگے اور کشمیر کے جھنڈے کو اُٹھاؤں گی۔ خبر رساں ایجنسی یو پی آئی کے مطابق انڈیا ٹوڈے نیوز چینل کے ساتھ ایک مفصل انٹرویو کے دوران پی ڈی پی صدر نے کہاکہ بھاجپا کی جانب سے گپکار گینگ کا خطاب دینا دراصل اُن کی ذہنی پریشانی کو عیاں کرتا ہے۔ انہوںنے کہاکہ بی جے پی اہم مدعوں کے بجائے ایسے معاملے اُچھال رہی ہے جن کا عوام کے ساتھ کوئی واسط نہیں ہوتا۔ انہوںنے کہاکہ اس وقت ملک میں بے روزگاری نے سنگین رخ اختیار کیا ہوا ہے ، معاشی صورتحال کسی سے ڈھکی چھپی نہیں تاہم بی جے پی ان اہم مسائل پر بات چیت کرنے کے بجائے غیر ( جاری صفحہ نمبر ۱۱پر)
ضروری معاملات اُٹھا رہی ہے۔ جو اُن کی ایک منصوبہ بند سازش ہے۔ بی جے پی کی جانب سے پی ڈی پی اور دوسری سیاسی پارٹیوں کو ملک دشمن قرار دینے کے بارے میں پوچھے گئے سوال کے جواب میں محبوبہ مفتی نے کہاکہ میں نے حلف بھارتی آئین کے تحت لیا ہے جبکہ جموںوکشمیر کا آئین بھی ہمیں بھارت سے ملا ہے ۔ انہوںنے کہاکہ جموںوکشمیر کا اپنا ایک جھنڈا ہے لہذا یہ کیسے ممکن ہے کہ جنہوںنے بھارتی آئین کو تسلیم کیا وہ ملک دشمن ہو سکتے ہیں۔ انہوںنے کہاکہ بھاجپا کو مجھے سبق سکھانے کی ضرورت نہیں کیونکہ میرے والد ہندوستانی تھے ۔ محبوبہ مفتی نے مزید بتایا کہ ہمیں بی جے پی سے سند لینے کی کوئی ضرورت نہیں ہے ۔
 انہوںنے الزام لگایا کہ بھاجپا نے جموں وکشمیر بینک کا بھیڑا غرق کیا ہے جبکہ کرپشن اور اقربا پروری جموںوکشمیر میں پروان چڑھی ہوئی ہے۔ پیپلز الائنس کی جانب سے چناو میں حصہ لینے کے بارے میں پوچھے گئے سوال کے جواب میں محبوبہ مفتی نے کہاکہ ہم نے کھبی یہ نہیں کہا کہ ہم الیکشن میں حصہ نہیں لیں گے۔ محبوبہ مفتی نے کہاکہ میں نے کہا تھا کہ جب تک جموںوکشمیر کو اپنا جھنڈا واپس نہیں کیا جاتا الیکشن نہیں لڑوں گی اور میں اس پر قائم ہوں۔ محبوبہ مفتی نے الزام لگایا کہ بھاجپا جموںوکشمیر کے وسائل کو لوٹنا چاہتی ہے اور ہم اس کی ہرگز اجازت نہیں دیں گے۔ مرکزی حکومت کی جانب سے جموںوکشمیر میں کرپشن اور ملی ٹینسی کو کنٹرول کرنے میں آپ کی ناکامی کے بارے میں پوچھے گئے سوال کے جواب میں محبوبہ مفتی نے کہاکہ اگر میرے اوپر کرپشن کا الزام درست ہے تو وہ مجھے سلاخوں کے پیچھے کیوں نہیں دھکیلتے ۔ انہوںنے الزام لگایا کہ بھاجپا نے اپنے اُمیدواروں پر پانی کی طرح پیسہ بہایا ہے ۔ انہوںنے کہاکہ دفعہ 370کی تنسیخ کے بعد جموںوکشمیر میں حالات بد سے بدتر ہے ، کرپشن کا دور دورہ ہے جبکہ لوگوں کو مختلف بہانوں سے ستایا جارہا ہے۔ انہوںنے کہاکہ موجودہ سائنسی دور میں جموںوکشمیر کے لوگ فور جی انٹرنیٹ سہولیات سے محروم ہے۔ انہوںنے کہاکہ اگر جموںوکشمیر میں حالات بہتر ہوئے ہیں تو ہمیں پُر امن احتجاج کی اجازت کیوں نہیں دی جاتی ، کیوں فور جی انٹرنیٹ کو بند کیا گیا ہے۔ وزیر داخلہ کی جانب سے گپکار گینگ قرار دینے کے بارے میں پوچھے گئے سوال کے جواب میں محبوبہ مفتی نے کہاکہ چین نے ایک ہزار کلومیٹر پر قبضہ جمایا ہے اس پر بات کرنے کے بجائے مرکزی وزیر داخلہ گپکار الائنس پر باتیں کر رہے ہیں۔ انہوںنے کہاکہ ملک کے وزیر داخلہ کو کسی دوسرے کے خلاف ناشائستہ زبان کا استعمال نہیں کرنا چاہئے تھا۔ محبوبہ مفتی نے کہاکہ کانگریس بھاجپا سے خوف کھا رہی ہے کیونکہ پہلے کانگریس نے گپکار الائنس میں شامل ہونے کا اعلان کیا وزیر داخلہ نے بیان کیا دیا کہ کانگریس کی مرکزی قیادت کے خیمہ میں زلزلہ آیا اور انہوںنے لاتعلقی ظاہر کی۔ادھر پی ڈی پی صدر اور سابق وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے الزام لگایا ہے کہ مقامی انتظامیہ نے انہےں نالہ رمبےار پر جانے سے روک دیا ہے جہاں پرغےر قانونی رےت نکالنے کا کام جاری ہے۔ سی اےن اےس کے مطابق محبوبہ مفتی نے ٹویٹ کیا کہ مرکزی حکومت طاقت کے بل پر جموں کشمیر کے لوگوں سے انتقام لے رہی ہے۔انہوں نے کہا ” ہمارے آئین اور جھنڈے ، جو ہمیں ملک کے آئین نے دیے ہیں، کو چھینا گیا اور اب آہستہ آہستہ ہم سے دوسری چیزیں چھینی جا رہی ہیں“۔ان کا کہنا تھا کہ جس طرح کہیں ڈاکو آکر لوٹ مچاتے ہیں اسی طرح جموں وکشمیر کو بھی دو دو ہاتھوں لوٹا جا رہا ہے۔محبوبہ مفتی نے ٹویٹ کیا کہ انہیں مقامی انتظامیہ نے ہفتہ کے روز رامبےار نالہ جانے سے روک دیا ہے یہ وہ جگہ ہے جہاں غیر قانونی ٹینڈروں کے ذریعہ ریت نکالنے کا کام بیرونی لوگوں کو دےا گےاہے اور مقامی لوگوں کو علاقہ سے روک دیا جاتا ہے۔ انہوں نے مرکزی حکومت پر الزام لگایا کہ وہ طاقت کے بل پر زمین اور وسائل کو لوٹ رہی ہے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں