کنٹرول لائن پر پھر گولہ باری، فوجی ہلاک

سانبہ سیکٹر میں پاکستانی ڈرون طیاروں کی دراندازی راجوری سیکٹر میں آر پار شیلنگ، سرحدی آبادی مسلسل خوفزدہ

سی این آئی ؍کے این ایس : سرینگر؍ہند پاک سرحدوں پر جاری کشیدگی کے بیچ نوشہرہ راجوری میں کنٹرول لائن پر آرپارگولہ باری میں فوج کا ایک حولدار ہلاک اور ایک فوجی اہلکار زخمی ہوا ہے ۔ اس دوران دفاعی ترجمان نے فوجی اہلکار کی ہلاکت کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ ہفتہ کے روز پاکستانی فوج نے ایک بار پھر جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے   (  جاری صفحہ نمبر ۱۱پر)
گولہ باری کی جس کا بھر پور جواب دیا گیا ۔ادھر سانبہ جموں میں پاکستانی ڈرونوں کوفضاءمیں چکر لگاتے ہوئے دیکھتے ہی بی ایف ایف اہلکاروںنے ڈرونوں پر گولیاں چلائیں جبکہ ڈرونوں کی موجودگی کے بعد حفاظتی ایجنسیوںکو چوکس رہنے کی ہدایت کی گئی ہے ۔اطلاعات کے مطابق ہندوستان، پاکستان کے مابین سرحدی کشیدگی برابر جاری ہے اور رواں ماہ اُس وقت اس میں اضافہ ہوا جب جموں کشمیر میں ہندوستان اور پاکستان کے مابین لگنے والی سرحدوں پر آر پار شدید گولہ باری ہوئی جس میںکم سے کم پانچ عام شہری اور پانچ فوجیوں سمیت دس افراد ہلاک ہوئے ۔جبکہ قریب دو دنوں تک سرحدوں پر خاموشی رہنے کے بعد رواں ہفتے جمعرات کو پھر گولہ باری کازبردست تبادلہ ہوا جس میں ایک خاتون زخمی ہوئی تھی۔ تازہ واقعے میںسنیچروار کی شب پاکستانی فوج نے راجوری کے نوشہرہ سیکٹر لام نامی سرحدی پٹی پر بھارتی فوج کی اگلی چوکیوںکو نشانہ بناکر شدید گولہ باری کی جبکہ پاکستانی فوج کی فائرنگ سے بھارتی فوج کا ایک حولدار ہلاک ہوااور نائک رینک کا ایک سپاہی زخمی ہوا جس کو فوری طور پر نزدیکی ہسپتال پہنچایا گیاجہاں اس کا علاج و معالجہ جاری ہے ۔ دفاعی ذرائع نے بتایا کہ پاک فوج کی بلا اشتعال گولہ باری کا بھر پور جواب دیتے ہوئے بھارتی فوج نے پاکستانی فوجی پکٹوں کو نشانہ بنایا جس میں متعدد فوجی ہلاک یا زخمی ہوئے ہوں گے ۔یاد رہے کہ ہندوستان اور پاکستانی سرحدوں پر کشیدگی برابر جاری ہے اور رواں ماہ کی 13تاریخ کو جموں کشمیر کے مختلف سرحدی علاقوں میں ہندوپاک افواج کے مابین ہوئی گولہ باری میں کم سے کم 10افراد ہلاک ہوئے تھے جن میں پانچ فوجی اور پانچ عام شہری شامل تھے جبکہ پچاس کے قریب رہائشی مکانوں کو نقصان پہنچنے کے علاوہ متعدد موشی بھی جان سے گئے تھے اس کے علاوہ تیس سے زیادہ افراد زخمی ہوئے تھے ۔ دریں اثناءگزشتہ شام جموں کے سانبہ سیکٹر میںپاکستان کی جانب سے دو ڈرون علاقے میں مشکوک حالت میں گھومتے ہوئے نظر آئے جس کے بعدبین الاقوامی سرحد پر تعینات بارڈر سیکورٹی فورسز کے اہلکاروںنے ڈرونوں پر گولیاں چلائی۔ ڈرونوں کی مشکوک نقل وحرکت دیکھتے ہوئے سرحدی حفاظتی فورسز کو چوکس رہنے کی ہدایت کی گئی ہے ۔ معلوم ہوا ہے کہ پاکستان کی جانب سے آئے ہوئے ڈرون 300سے 500میٹر بھارتی حدود میں داخل ہوئے تھے جس کے بعد وہاںتعینات بی ایس ایف اہلکاروںنے ڈرونوں پر گولیاں چلائی تاہم اندھیرے میں ڈرون غائب ہوئے جن کو تلاشنے کےلئے علاقے میں تلاشی کارروائی جاری ہے ۔ ادھر ڈرونوں کی موجودگی کے بعد فورسز کو متحرک اور چوکس رہنے کی ہدایت کی گئی ہے ۔

واضح رہے کہ جموں وکشمیر پولیس اور فورسز نے بدھ کو نگروٹہ میں چار عسکریت پسندوں کو جاں بحق کیا تھا۔ نگروٹہ جھڑپ میں مارے گئے چاروں جنگجوءجیش محمدسے جڑے ہوئے تھے۔ ذرائع کے مطابق چاروں عسکریت پسند ہندوستان - پاکستان بین الاقوامی سرحد سے رات میں دراندازی کرکے سانبا سیکٹر پہنچے تھے۔ یہاں پہلے سے انتظار کر رہا ان کا ایک کوریئر جو ٹرک لے کر آیا تھا، وہ ان کو لے کر کشمیر جانے کے فراق میں تھا۔ ریاست میں ڈی سی سی الیکشن کو لے کر پہلے ہی خدشہ ظاہر کیا جاچکا ہے کہ عسکریت پسند اس میں رخنہ اندازی کرسکتے ہیں۔ جموں وکشمیر کے پولیس جنرل ڈائریکٹر دلباغ سنگھ نے بھی گزشتہ ہفتے کہا تھا کہ جنگجو آئندہ ڈسٹرکٹ ڈیولپمنٹ کونسل (ڈی ڈی سی) الیکشن میں رخنہ اندازی کرنے کی کوشش کرسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا تھا کہ سرحد پار سے مرکز کے زیر انتظام ریاست میں پریشانی پیدا کرنے کی مسلسل کوشش کی جارہی ہے۔

مزید دیکهے

متعلقہ خبریں