نوشہرہ سیکٹر میں جنگ جیسی صورتحال- نصف شب شدید گولہ باری سے د رجنوں مکان تباہ ، آر پار کئی ہلاک - راجوری میں تمام سکول کالج بند رکھنے کے احکامات سرحدی علاقوں میں رہنے والے لوگ ترک سکونت کرنے لگے

11 مئ 2017 (05:08)

جموں کشمیر نیوزسروسبرصغیر کی دو ایٹمی طاقتوں کی افواج نے ایک مرتبہ پر حد بندی لکیر پر نوشہرہ سیکٹر راجوری میں ایکدوسرے کے خلاف جنگی ہتھیاروں کا استعمال کیا جس کے نتیجے میں آر پار ایک خاتون سمیت2افراد جاں بحق اور 5دیگر افراد زخمی ہوئے جبکہ کئی ڈھانچوں کو بھی شدید نقصان پہنچا ۔دونوں ممالک نے حسب روایت ایکدوسرے پر جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کا الزام عائد کیا ۔اس دوران آر پار سرحدی علاقوں میں خوف وہراس کی لہر دوڑ گئی اور درجنوں کنبے نقل مکانی کرنے پر مجبور ہوئے جبکہ راجوری کے سرحدی علاقوں میں سرحدی کشیدگی وتنائو کے باعث تعلیمی اداروں کو غیر معینہ عرصے کیلئے بند کردیا گیا ۔ جموں کشمیر کو تقسیم کرنے والی حد بندی لکیر  ایک مرتبہ پھر میدان ِ جنگ میں تبدیل ہوئی کیو نکہ ہند پاک افواج نے ایکدوسرے کے خلاف ایک مرتبہ پھر جنگی ہتھیاروں کا استعمال کیا ۔آر پار آتشی گولہ باری کے نتیجے میں آر پار جانی ومالی نقصان کی اطلاعات ہیں ۔ہند پاک افواج کے درمیان نوشہرہ سیکٹر راجوری میں حد بندی لکیر پر گولہ باری کا تبادلہ ہوا ۔آر پار گولہ باری کے نتیجے میں نوشہرہ سیکٹر میں ایک خاتون کی موت ہوئی جبکہ متعدد زخمی ہوئے ۔اس دوران آتشی گولہ باری کے سبب کئی ڈھانچوں کو بھی نقصان پہنچا ۔ذرائع کے مطابق بدھ کی شب 10بجکر40منٹ پر ہند پاک افواج کے درمیان آتشی گولہ باری کا تبادلہ شروع ہوا ،جو وقفے وقفے سے رات دیر گئے تک جاری رہی ۔جموں میں مقیم دفاعی ترجمان لیفٹنٹ کرنل منیش مہتا نے بتایا کہ بدھ کی شب کو پاکستانی فوج نے بھارت کی اگلی چوکیوں کو نشانہ بنا نے کی غرض سے بلا اشتعال فائرنگ اور شلنگ کی ۔ان کا کہناتھا کہ جنگ بندی معاہدے کی ایک بار پھر پاکستانی فوج نے خلاف ورزی کی اور نوشہرہ سیکٹر میں یہ واقعہ پیش آیا ۔دفاعی ترجمان نے بتا یا کہ چوٹھے ہتھیاروں کے علاوہ پاکستانی فوج نے خود کار ہتھیاروں کا بھی استعمال کیا ،جس دوران پاکستانی فوج کی جانب سے 82ایم ایم اور120ایم ایم ماٹر شل داغے ۔دفاعی ترجما ن نے بتایا کہ یہ سلسلہ بدھ کی شب شروع ہوا جو جمعرات کو بھی جاری رہا ۔انہوں نے کہا کہ بھارتی فوج نے جنگ بندی کی خلاف ورزی کا جواب مئوثر انداز میں دیا ۔معلوم ہوا ہے کہ طرفین کے مابین آتشی گولہ باری کے تبادلے میں35سالہ اختر بی ہلاک اور اس کا شوہر محمد حنیف زخمی ہوا ۔معلوم ہوا ہے کہ پاکستانی کی جانب سے داغے گئے ماٹر شلوں میں سے ایک شل لام بلیٹ نوشہرہ سیکٹر راجوری کے گائوں میں پڑا ،جسکی وجہ سے جانی نقصان ہوا ۔معلوم ہوا ہے کہ آر پار آتشی گولہ باری کے نتیجے میں کئی رہائشی ودیگر ڈھانچوں کو بھی نقصان پہنچا ۔اطلاعات کے مطابق جمعرات کو بھی ہند پاک افواج کے درمیان آتشی گولہ باری کاسلسلہ وقفے وقفے سے جاری رہا ۔سرحدی کشیدگی اور تنائو کے بیچ ضلع انتظامیہ راجوری نے حد بندی لکیر کے نزدیک واقع تعلیمی اداروں کو بند رکھنے کی ہدایت دی ۔بعض رپورٹروں کے مطابق ان تعلیمی اداروں کو عارضی طور پر پناہ گاہ کے بطور استعمال کیا جارہا ہے کیو نکہ عام شہریوں کو شلنگ اور فائرنگ سے محفوظ رکھنے کیلئے کئی دیہات کے لوگوں کو یہاں منتقل کیا گیا ۔بعض رپورٹس کے مطابق کچھ کنبوں نے عارضی طور پر نقل مکانی بھی کی ،تاکہ سرحدی کشید گی سے وہ محفوظ رہ سکے ۔ادھر پاکستانی میڈیا رپورٹس کے مطابق بھارتی بارڈر سیکیورٹی فورس ﴿بی ایس ایف﴾ کی جانب سے لائن آف کنٹرول ﴿ایل او سی﴾ کے قریب جموں و کشمیر کے مختلف علاقوں میں کی جانے والی شیلنگ کے نتیجے میں ایک نوجوان جاں بحق جبکہ تین افراد زخمی ہوگئے۔پاکستانی زیر انتظام کشمیر کے ضلع کوٹلی کے سینئر سپرنٹنڈنٹ پولیس ﴿ایس ایس پی﴾ چوہدری ذوالقرنین سرفراز کے مطابق بدھ کی رات2 بجے سبز کوٹ گاؤں کے ایک مکان پر گولہ گرا، جس سے مکان میں سوئے ہوئے افراد میں سے ایک شخص جاں بحق جبکہ دو زخمی ہوگئے۔واضح رہے کہ سبز کوٹ گاؤں ضلع کوٹلی کے چرہوئی سیکٹر کے قریب واقع ہے۔ایس ایس پی کوٹلی کے مطابق ہلاک ہونے والے نوجوان کی شناخت 18سالہ رضوان کے نام سے ہوئی جبکہ زخمی ہونے والے اہل خانہ میں اس کا 14 سالہ بھائی کامران اور ان دونوں کی دادی ولایت بیگم شامل ہیں۔زخمیوں کو فوری طور پر ضلع میرپور کے ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹرز ہسپتال منتقل کیا گیا۔ایس ایس پی کے مطابق کوٹلی کے کھوئی رتہ سیکٹر کے گاؤں تائین میں بھی ایک اور بزرگ شخص، 75 سالہ راجا عزیز شیلنگ سے زخمی ہوئے۔چوہدری ذوالقرنین سرفراز کے مطابق بھارتی فورسز کی جانب سے شیلنگ کا سلسلہ گذشتہ رات بھر جاری رہا جبکہ صبح اس کی شدت میں کچھ کمی آئی۔سماہنی سیکٹر کے پولیس حکام کے مطابق بھمبر ضلع کا یہ حصہ بھی شیلنگ کی زد پر رہا تاہم کسی شہری کے زخمی ہونے کی اطلاع سامنے نہیں آئی۔خیال رہے کہ بھمبر ضلع کا سماہنی سیکٹر کوٹلی کے چرہوئی سیکٹر کے ساتھ واقع ہے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق 6مئی کو نکیال سیکٹر کے دھروتی موہرا گاؤں میں گولہ باری کے نتیجے میں مکان پر گرنے والے گولے سے اسی خاندان کے 4افراد زخمی ہوئے تھے۔یہ شیلنگ ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب لائن آف کنٹرول پر دونوں جانب کشیدہ صورتحال ہیں، پاک بھارت تعلقات کشیدگی میں حالیہ اضافہ اس وقت شروع ہوا جب رواں ماہ بھارت نے پاکستان پر اپنے فوجیوں کو ہلاک کرنے اور ان کی لاشوں کو مسخ کرنے کا الزام عائد کیا۔دوسری جانب ان الزامات کی سختی سے تردید کرتے ہوئے پاکستان کا کہنا تھا کہ پاک فوج کسی بھی فوجی کی بے توقیری نہیں کرتی، چاہے وہ بھارتی ہی کیوں نہ ہو۔

تبصرے