سیرجاگیر میں طویل کریک ڈائون ختم کوئی جھڑپ ہوئی نہ کسی کی گرفتاری

18 مئ 2017 (06:23)

سرینگر ترال کے سیر جاگیر گائوںمیں وسیع پیمانے پر کریک ڈائون 18گھنٹے بعد ختم کردی گئی۔تاہم اس کریک ڈائون اور تلاشی کارروائی کے دوران کسی کی بھی گرفتاری عمل میں نہیں لائی گئی ۔ واضح رہے کہ بدھ کی شام کو فوج وفورسز سیر جاگیر ترال کا اچانک محاصرہ کیا اور یہاں بھی شو پیان طرز کی کارروائی عمل میں لائی گئی۔ فوج وفورسز کو اطلاع ملی تھی کہ سیر جاگیر ترال میں جنگجوئوں نے پناہ لی ہے جس کے بعد وسیع پیمانے پر فوج وفورسز نے اس گائوں کو اپنی گھیرے میں لیا اور جنگجو مخالف آپریشن شروع کیا۔ ذرائع کے مطابق جنگجوئوں کی موجودگی کی اطلاع ملتے ہی 42آر آر ،ایس اوجی پلوامہ اور دیگر سیکورٹی فورسز اہلکاروں نے سیر جاگیر اور اسکے مضافاتی دیہات کو نرغے میں لیا اور مسلسل18گھنٹے تک اس علاقے کو محاصرے میں رکھا ۔اس دوران یہاں گھر گھر تلاشی کارروائی عمل  میں لائی گئی اور لوگوں کو ایک جگہ جمع کرکے ان کے شناختی کارڈ بھی چیک کئے گئے۔رات بھر فوج وفورسز نے سیرجاگیر اور اسکے مضافاتی علاقوں کو محاصرے میں رکھا اور اس مقصد کیلئے جنریٹروں کا بھی استعمال کیا گیا ۔بدھ رات دیر گئے اس آپریشن کو جمعرات کی صبح تک ملتوی کیا گیا ،تاہم گائوں کو پہرے کو برقرار رکھا گیا اور کسی بھی نقل وحرکت پر کھڑی نگاہ رکھی گئی ۔جمعرات کی صبح اس آپریشن کو دوبارہ شروع کیا گیا اور تلاشی کارروائی کا عمل جاری رکھا ۔بالآخر18گھنٹوں کے بعد جنوبی قصبہ ترال کے سیر جاگیر گائوںمیں وسیع پیمانے پر ’کریک ڈائون اور گھر گھر تلاشی کارروائی‘کو ختم کردیا گیا۔

تبصرے